Skip to main content
منقبت

پیروں کے آپ پیر ہیں یا غوث المدد

By November 17, 2020No Comments

Piron Kai Ap Pir Hain Yaa Ghaus Al Madad
Ahle Safaa Kai Mir Hain Yaa Ghaus Al Madad

Ranj o Alam Kasir Hain Yaa Ghaus Al Madad
Ham Ajiz o Asir Hain Yaa Ghaus Al Madad

Ham Kaisaai Ji Rahai Hain Ye Tum Se kya Kahaain
Ham Hain Alam Kai Tir Hain Yaa Ghaus Al Madad

Tir e Nazar Se Phair Do Saarai Alam kai Tir
kya Ye Alam Kai Tir Hain Yaa Ghaus Al Madad

Tere Hi Haath Laaj Hai Yaa Pir e Dastagir
Ham Tujh Se Dastagir Hain Yaa Ghaus Al Madad

Idfa’ Sharaarash Shar Yaa Ghausanal Abar
Shar Kai Sharar Khatir Hain Yaa Ghaus Al Madad

Kis Dil Se Ho Bayaan e Bai Daad e Zaalimaan
Zaalim Barai Sharir Hain Yaa Ghaus Al Madad

Ahle Safaa Nai Paa’i Tum Se Raah e Safaa
Sab Tum Se Mustanir Hain Yaa Ghaus Al Madad

Sadqah Rasul e Paak Ka Jholi Mai Daal Do
Hum Qaadiri Faqir Hain Yaa Ghaus Al Madad

Dil Ki Sunaa’e Akhtar Dil Ki Zubaan Mai
Kehtai Ye Behtai Nir Hain Yaa Ghaus Al Madad

پیروں کے آپ پیر ہیں یا غوث المدد
اہل صفا کے میر ہیں یا غوث المدد

رنج و الم کثیر ہیں یا غوث المدد
ہم عاجز و اسیر ہیں یا غوث المدد

ہم کیسے جی رہے ہیں یہ تم سے کیا کہیں
ہم ہیں الم کے تیر ہیں یا غوث المدد

تیر نظر سے پھیر دو سارے الم کے تیر
کیا یہ الم کے تیر ہیں یا غوث المدد

تیرے ہی ہاتھ لاج ہے یا پیر دستگیر
ہم تجھ سے دستگیر ہیں یا غوث المدد

اِدْفَعْ شَرَارَ الشَرْ یَا غَوْثَنَا الْاَبَرْ
شر کے شرر خطیر ہیں یا غوث المدد

کس دل سے ہو بیانِ بے داد ظالماں
ظالم بڑے شریر ہیں یا غوث المدد

اہلِ صفا نے پائی ہے تم سے رہِ صفا
سب تم سے مستنیر ہیں یا غوث المدد

صدقہ رسولِ پاک کا جھولی میں ڈال دو
ہم قادری فقیر ہیں یا غوث المدد

دل کی سنائے اخترؔ دل کی زبان میں
کہتے یہ بہتے نیر ہیں یا غوث المدد