Naat Lyrics

پھر کے گلی گلی تباہ ٹھو کریں سب کی کھائے کیوں

By February 6, 2020No Comments

Phir key gali gali tabaah thokarein sabki khaayein kyun
Dil ko jo aql de Khuda teri gali sey jaaye kyun

Rukhsat e qaafila ka shor ghash sey hamein uthaaye kyun
Sote hain unke saaye mein koi hamain jagaye kyun

Baar na thay habeeb ko paalte hi ghareeb ko
Royen jo ab naseeb ko chain kaho ganwaaye kyun

Yaad e Huzoor ki qasam ghaflat e aish hay sitam
Khoob hay qaid e gham mein ham koi hamein churaye kyun

Dekh key hazrat e Ghani phail pare faqeer bhi
Chaayi hay ab to chaaoni hashr hi aa na jaaye kyun

Jaan hay ishq e Mustafa roz fazoon kare Khuda
Jis ko ho dard ka mazaa naaz e dawa uthaye kyun

Ham to hain aap dil figaar gham mein hansi hay naa gawaar
Cher key gul ko nau bahaar khoon hamein rulaaye kyun

Yaa to yoon hi tarap key jaayein ya wahi daam sey churayein
Mannat e ghair kyun uthayein koi taras jataaye kyun

Un key jalaal ka asar dil sey lagaaye hay qamar
Jo key ho laut zakhm par daagh e jigar mitaye kyun

Khush rahe gul sey andaleeb khaar e haram mujhe naseeb
Meri balaa bhi zikr par phool key khaar khaaye kyun

Gard e malaal agar dhule dil ki kali agar khile
Barq sey aankh kyun jale roone pe muskuraaye kyun

Jaan e safar naseeb ko kis ne kaha maze sey siwaa
Khatka agar seher ka ho sham sey maut aaye kyun

Ab to na rok aay ghani aadat e sag bigar gayi
Mere Kareem pehle hi luqma e tar khilaaye kyun

Raah e Nabi me kya kami farsh biyaade deedah ki
Chadar e zil mulgaji zer e qadam bichaaye kyun

Sang e dar e Huzoor sey ham ko Khuda na sabr de
Jaana hay sar ko jaa chuke dil ko qaraar aaye kyun

Hay to Raza nira sitam jurm pe gar lajaayein ham
Koi bajaaye soz e gham saaz e tarab bajaaye kyun

AalaHazrat
…………………..
پھر کے گلی گلی تباہ ٹھو کریں سب کی کھائے کیوں
دِل کو جو عقل دے خدا تیری گلی سے جائے کیوں

رُخصتِ قافلہ کا شور غش سے ہمیں اُٹھائے کیوں
سوتے ہیں اُن کے سایہ میں کوئی ہمیں جگائے کیوں

بار نہ تھے حبیب کو پالتے ہی غریب کو
روئیں جو اَبْ نصیب کو چین کہو گنوائے کیوں

یادِ حُضور کی قسم غفلتِ عیش ہے سِتم
خُوب ہیں قیدِ غم میں ہم کوئی ہمیں چُھڑائے کیوں

دیکھ کے حضرتِ غنی پھیل پڑے فقیر بھی
چھائی ہے اب تو چھاؤنی حشر ہی آنہ جائے کیوں

جان ہے عشقِ مصطفٰے روز فَزوں کرے خدا
جس کو ہو درد کا مزہ نازِ دوا اُٹھائے کیوں

ہم تو ہیں آپ دِل فِگار غم میں ہنسی ہے ناگوار
چھیڑ کے گُل کو نوبہار خون ہمیں رُلائے کیوں

یا تو یوں ہی تڑپ کے جائیں یا وہی دام سے چھڑائیں
مِنّت غیر کیوں اُٹھائیں کوئی ترس جتائے کیوں

اُن کے جلال کا اثر دل سے لگائے ہے قمر
جو کہ ہو لوٹ زخم پر داغِ جگر مٹائے کیوں

خوش رہے گُل سے عندلیب خارِ حرم مجھے نصیب
میری بَلا بھی ذِکر پر پھول کے خار کھائے کیوں

گردِ ملال اگر دُھلے دِل کی کلی اگر کِھلے
بَرق سے آنکھ کیوں جلے رونے پہ مسکرائے کیوں

جانِ سفر نصیب کو کس نے کہا مزے سے سو
کھٹکا اگر سحر کا ہو شام سے موت آئے کیوں

اب تو نہ روک اے غنی عادتِ سگ بگڑ گئی
میرے کریم پہلے ہی لقمہ تر کھلائے کیوں

راہِ نبی میں کیا کمی فرشِ بیاض دِیدہ کی
چادرِ ظل ہے مَلْگجی زیرِ قدم بچھائے کیوں

سنگِ درِ حضور سے ہم کو خدا نہ صبر دے
جانا ہے سر کو جا چکے دل کو قرار آئے کیوں

ہے تو رضاؔ نِرا سِتَم جُرم پہ گر لجائیں ہم
کوئی بجائے سوزِ غم سازِ طَرَب بجائے کیوں

اعلی حضرت قدس سرہ