Skip to main content
نعت

پشیماں نہ ہوں شرمساروں سے کہہ دو

By August 17, 2021No Comments

پشیماں نہ ہوں شرمساروں سے کہہ دو
نبیﷺ آگئے غم کے ماروں سے کہہ دو


مجھے بھاگئے ہیں کھجوروں کے جھرمٹ
ذرا خلد کے سبزہ زاروں سے کہہ دو


محمدﷺ چلے ہیں سوئے عرشِ اعظم
ادب سے رہیں چاند تاروں سے کہہ دو


زمانے کے اندھوں کو احمد کی منزل
بتادیں ذرا تیس پاروں سے کہہ دو


مجھے خواب ہی میں نظارہ کرادیں
مدینے کے دلکش نظاروں سے کہہ دو


ذرا چھیڑدیں نغمۂ نعت احمد
میری زندگی کے ستاروں سے کہہ دو


ہے جان گلستاں کی آمد چمن میں
ہوں جاروب کش نو بہاروں سے کہہ دو


یہی تو ہیں اخؔتر مری زندگانی
نہ ہوں سرد دل کے شراروں سے کہہ دو

Was this article helpful?
YesNo