Skip to main content
نعت

یَاْ اَیُُّھَا الْمُزَّمِّلٗ

By جولائی 6, 2021No Comments

یَاْ اَیُُّھَا الْمُزَّمِّلٗ

اے مرسل پاکیزہ خو
کس خلق کا پیکر ہے تو
قرآں ہے گویا ہوبہو

کشور کشاۓ بحر و بر
احسان ہے تو سر بسر
تو ہر زماں کی آبرو

تو کائنات حسن ہے
تیری زکات حسن ہے
یہ آب و گل، یہ رنگ و بو

سب رنگ ہیں اک رنگ سے
بتلا دیا کس ڈھنگ سے
دل پر بٹھا کر نقش ھُو

تھے وہ نجوم اہتدا
بخت ان کے تھے کتنے رسا
بیٹھے جو تیرے روبرو

روما، حبش، ایران سے
سب آکے تیرے ہو گئے
جن کو تھی حق کی جستجو

خوابوں میں آکر مسکرا
بیداریوں کو جگمگا
اے آمنہ کے ماہ رو

چہرہ ترا تکتا رہوں
تجھ سے تری باتیں سنوں
رکھتا ہوں میں بھی آرزو

دیکھے دعا باب اثر
شام الم کی ہو سحر
مدحت سرا ہو مو بہ مو
یَاْ اَیُُّھَا الْمُزَّمِّلٗ

کلام
حفیظ تائب