تم رب کا انتخاب ہو عزت مآب ہو
بے مثل بے مثال حسیں لا جواب ہو

Tum Rab Ka Intekhaab Ho Izzat Ma’ab Ho
Be Misl Be Misaal Haseen Laa Jawab Ho

Aakhen Habeebe Paak Ki Irfaa Ka Jaam Hai
Saari Khudai Jis Se Huwi Shaad kaam Hai
Naaza Hai Husan Jiss Par Woh Husnul Ma’ab Ho
Be Misl Be Misaal Haseen Laa Jawab Ho

Tum Rab Ka Intekhaab Ho Izzat Ma’ab Ho

Laab Haaye Paak Laale Yaman Ko Hajaye Hai
Wan-najm Daat Rab Ne Kaise Sajaye Hai
Hoor-e-jina Bhi Dang Hai Woh Aaftab Ho
Be Misl Be Misaal Haseen Laa Jawab Ho

Tum Rab Ka Intekhaab Ho Izzat Ma’ab Ho

Dast-e-Karam Tumhare Dariya-e-jood Hai
Allah Ke Khazano Ka Jiss Me Wajood Hai
Khaali Na Jaaye Koi Ke Jaane Ijaab Ho
Be Misl Be Misaal Haseen Laa Jawab Ho

Tum Rab Ka Intekhaab Ho Izzat Ma’ab Ho

I’saa Ki Ho Naweed Duaae Khaleel Ho
Mahepat Ka Gul Ho Aur Khuda Ki Daleel Ho
Dekha Tha Aamina Ne Darakhsha Woh Khuwab Ho
Be Misl Be Misaal Haseen Laa Jawab Ho

Tum Rab Ka Intekhaab Ho Izzat Ma’ab Ho

Quraan Jiss Ki Shaan Me Ratbul Nishaan Hai
Wal-lail Khair Half Khuda Bayaan Hai
Mushaaq Jiss Ka Rab Hai Tum Aisi Janaab Ho
Be Misl Be Misaal Haseen Laa Jawab Ho

Tum Rab Ka Intekhaab Ho Izzat Ma’ab Ho

Afqaar Sajda Reez Hai Alfaaz Hai Khatam
Likkhu Main Tum Ko Mera Chalta Nahi Qalam
Unwaan Sab Khatam Hai Tum Aisi Kitaab Ho
Be Misl Be Misaal Haseen Laa Jawab Ho

Tum Rab Ka Intekhaab Ho Izzat Ma’ab Ho

Sayyed Ameen Aap Ka Adna Gulaam Hai
Shayar Nahi Hai Fir Bhi Likha Ye Kalaam Hai
Ho Ishq Me Fanna Youn Ke Jal kar Kabab Ho
Be Misl Be Misaal Haseen Laa Jawab Ho

Tum Rab Ka Intekhaab Ho Izzat Ma’ab Ho
Be Misl Be Misaal Haseen Laa Jawab Ho

Poet- Sayyed Aminul Qadri

تم رب کا انتخاب ہو عزت مآب ہو
بے مثل بے مثال حسیں لا جواب ہو

چہرہ تمہارا مصحف قرآن سا لگے
تفسیر گیسو ابروئیں آیات سا لگے
قرب خدا کا تم ہی تو تنہا نصاب ہو

آنکھیں حبیب پاک کی عرفاں کا جام ہیں
ساری خدائی جس سے ہوئی شادکام ہے
نازاں ہے حسن جس پہ وہ حسن المآب ہو

لب ہائے پاک لعل یمن کو لجائے ہیں
والنجم دانت کیسے رب نے بنائے ہیں
حور جناں بھی دنگ ہیں وہ آفتاب ہو

دست کرم تمہارے دریائے جود ہیں
اللہ کے خزانوں کا جس میں وجود ہے
خالی نہ جائے کوئی کہ جان اجاب ہو

عیسی کی ہو نوید دعائے خلیل ہو
مہبط کا گل ہو اور خدا کی دلیل ہو
دیکھا تھا آمنہ نے درخشاں وہ خواب ہو

قرآن جس کی شان میں رطب اللسان ہے
واللیل خیر الف خدا کا بیان ہے
مشتاق جس کا رب ہے تم ایسی جناب ہو

افکار سجدہ ریز ہیں الفاظ ہیں ختم
لکھوں میں تم کوکیا مرا چلتا نہیں قلم
عنوان سب ختم ہیں تم ایسی کتاب ہو

سید امین آپ کا ادنی غلام ہے
شاعر نہیں ہے پھر بھی لکھا یہ کلام ہے
ہو عشق میں فنا یوں کہ جل کر کباب ہو

سید امین القادری