Naatنعت

Suntey hain keh mehshar mein

By October 13, 2020No Comments

Suntey hain keh mehshar mein sirf unki rasaai hay
Gar unki rasai hay lo jab to ban aayi hay

Machla hay keh rehmat ne ummeed bandhaayi hay
Kya baat teri mujrim kya baat banaayi hay

Sab ne saf e mehshar me lalkaar diya hum ko
Aay bekason key Aaqa ab teri duhayi hay

Yoon to sab unhi ka hay par dil ki agar poocho
Yeh toote huwe dil hi khaas unki kamaayi hay

Zaair gaye bhi kab key din dhalne pe hay pyaare
Uth mere akele chal kya der lagayi hay

Baazaare ‘amal mein to sauda nah bana apna
Sarkaar e karam tujh mein ‘aibi ki samaayi hay

Girte huwon ko muzda sajde me gire Maula
Ro ro key shafaa’at ki tamheed utthaayi hay

Aay dil ye sulagna kya jalna hay to jal bhi utth
Dam ghutne laga zaalim kya dhooni ramaayi hay

Mujrim ko na sharmawo ehbaab kafan dhak do
Moonh dekh key kya hoga parde mein bhalaayi hay

Ab aap hi sambhaalein to kaam apne sambhal jaayein
Humne to kamayi sab khelon mein gawaayi hay

Ey ‘ishq tere sadqe jalne sey chhutte saste
Jo aag bujhaa degi woh aag lagaayi hay

Hirs o hawas e bad sey dil tu bhi sitam kar le
Tu hi nahin baygaana duniya hi paraayi hay

Hum dil jaley hain kis key hat fitnon key parkaale
Kyun phoonk doon ik uff sey kya aag lagayi hay

Taiba na sahi afzal Makkah hi barraa zaahid
Hum ‘ishq key bande hain kyun baat barhaayi hay

Matla’ mein yeh shak kya tha wallaah Raza wallaah
Sirf unki rasaai hay sirf unki rasaai hay

سُنتے ہیں کہ محشر میں صرف اُن کی رَسائی ہے
گر اُن کی رَسائی ہے لو جب تو بن آئی ہے

مچلا ہے کہ رحمت نے اُمید بندھائی ہے
کیا بات تِری مجرم کیا بات بَنائی ہے

سب نے صف محشر میں لَلکار دیا ہم کو
اے بے کسوں کے آقا اب تیری دُہائی ہے

یُوں تو سب اُنہیں کا ہے پَر دل کی اگر پوچھو
یہ ٹُوٹے ہوئے دِل ہی خاص اُن کی کمائی ہے

زائرْ گئے بھی کب کے، دِن ڈَھلنے پہ ہے پیارے
اُٹھ میرے اَکیلے چل کیا دیر لگائی ہے

بازارِ عمل میں تو سودا نہ بنا اپنا
سرکارِ کرم تجھ میں عیبی کی سمَائی ہے

گرتے ہووں کو مژدہ سجدے میں گِرے مولیٰ
رو رو کے شفاعت کی تمہید اُٹھائی ہے

اے دل یہ سُلگنا کیا جلنا ہے تو جل بھی اُٹھ
دَم گھٹنے لگا ظالِم کیا دُھونی رَمائی ہے

مجرم کو نہ شرماؤ احباب کفن ڈَھک دو
مُنھ دیکھ کے کیا ہو گا پردے میں بھلائی ہے

اب آپ ہی سنبھالیں تو کام اپنے سنبھل جائیں
ہم نے تو کمائی سب کھیلوں میں گنوائی ہے

اے عشق تِرے صَدقے جلنے سے چُھٹے سَستے
جو آگ بجھا دے گی وہ آگ لگائی ہے

حرص و ہوسِ بَد سے دل تُو بھی سِتَم کر لے
تُو ہی نہیں بے گانہ دُنیا ہی پَرائی ہے

ہم دِل جلے ہیں کس کے ہٹ فتنوں کے پر کالے
کیوں پُھونک دُوں اِک اُف سے کیا آگ لگائی ہے

طیبہ نہ سہی اَفضل مَکّہ ہی بڑا زاہِد
ہم عِشق کے بندے ہیں کیوں بات بڑھائی ہے

مَطْلَع میں یہ شک کیا تھا واللہ رضاؔ واللہ
صرف اُن کی رَسائی ہے صرف اُن کی رَسائی ہے