Skip to main content

Subha Taibah mein hui bat taa hay baara noor ka
Sadqah lenay noor ka aaya hay taara noor ka

Baagh e Taiba mein suhaanaa phool phoola noor ka
Mast e boo hain bulbulein padhti hain kalma noor ka

Baarhwein key chaand ka mujra hay sajdah noor ka
Baarah burjon sey jhukaa ek ik sitaarah noor ka

Un key qasr e qadr sey Khuld eik kamrah noor ka
Sidrah paayein baagh mein nanhaa saa pauda noor ka

Arsh bhi firdaus bhi uss shaah e waala noor ka
Yeh muthamman burj woh mushkuw e a’laa noor ka

Aayi bid’at chaayi zulmat rang badla noor ka
Maah e sunnat mehr e tal’at ley ley badla noor ka

Tere hi maathe rahaa aay jaan e sehra noor ka
Bakht jaaga noor ka chamkaa sitaaraa noor ka

Mein gadaa tu baadshah bhar dey piyaalah noor ka
Noor din doonaa tera dey daal sadqah noor ka

Teri hi jaanib hay paanchon waqt sajdah noor ka
Rukh hay Qibla noor ka abru hay ka’aba noor ka

Pusht par dhalkaa sar e anwar sey shamla noor ka
Dekhein Moosa Toor sey utraa sahifa noor ka

Taaj waaley dekh kar tera ‘imaama noor ka
Sar jhukaatey hain Ilaahi bol baala noor ka

Beeni pur noor par rakhshaan hay bukkah noor ka
Hay liwaa ul hamd par urtaa phareraa noor ka

Mus haf e aariz pey hay khat e shafee’ah noor ka
Lo siyahkaaro Mubarak ho qabalah noor ka

Aab e zar banta hay ‘aariz par paseena noor ka
Mus haf e i’jaaz par charhta hay sona noor ka

Pech karta hay fida hone ko lam’ah noor ka
Gird e sar phirne ko banta hay ‘imaamah noor ka

Haibat e ‘aariz sey tharraata hay sho’la noor ka
Kafsh e paa par gir key ban jaata hay guppha noor ka

Sham’a dil mishkaat tan seena zujaajah noor ka
Teri soorat key liye aaya hay soorah noor ka

Mail sey kis darja suthraa hay woh putla noor ka
Hay gale mein aaj tak kora hi kurtaa noor ka

Tere aagey khaak par jhukta hay maatha noor ka
Noor ne paaya tere sajde sey seema noor ka

Tu hay saaya noor ka har uzw tukrra noor ka
Saaya ka saaya nah hota hay nah saaya noor ka

Kya bana naam e Khuda asraa ka dulha noor ka
Sar pey sehra noor ka bar mein shahaanah noor ka

Bazm e wahdat mein mazaa hoga dobala noor ka
Milne sham’a Toor sey jaata hay ikka noor ka

Wasf e rukh mein gaati hain hoorein taraana noor ka
Qudrati beenon mein kya bajta hay lehra noor ka

Yeh kitaab e kun mein aayaa turfa aayah noor ka
Ghair e qaayil kuch nah samjhaa koi Ma’na noor ka

Dekhne waalon ney kuch dekha nah bhaala noor ka
Man ra’ aa kaisaa yeh aaina dikhaaya noor ka

Subha kardi kufr ki saccha tha muzda noor ka
Shaam hi sey tha shab e teerah ko dharrka noor ka

Parti hay noori bharan umdaa hay daryaa noor ka
Sar jhuka aay kisht e kufr aataa hay ahlaa noor ka

Naariyon ka daur tha dil jal raha tha noor ka
tum ko dekhaa ho gaya thanda kalejaa noor ka

Naskh adiyaan karke khud qabza bithaaya noor ka
Taajwar ney kar liya kaccha ‘ilaaqah noor ka

Jo gadaa dekho liye jaata hay tora noor ka
Noor ki sarkaar hay kya isme tora noor ka

Bheekh ley sarkaar sey laa jald kaasah noor ka
Maah e naw Taibah mein bat ta hay maheenah noor ka

Dekh unke hote naa zebaa hay da’waa noor ka
Mehr likh dey yaan key zarron ko muchalka noor ka

Yaan bhi daagh e sajdah e Taibah hay tamghaa noor ka
Aay qamar kya tere hi maathey hay teekaa noor ka

Sham’a saan eik eik parwaanah hay is baa noor ka
Noor e Haq sey lau lagaaye dil mein rishtah noor ka

Anjuman waaley hain anjum bazm e halqa noor ka
Chaand par taaron key jhurmat sey hay haalah noor ka

Teri nasl e paak mein hay bacha bacha noor ka
Tu hay ‘ain e noor tera sab gharana noor ka

Noor ki sarkaar sey paaya doshala noor ka
Ho mubarak tum ko Zun Noorain jora noor ka

Kis key parde ney kiya aaina andha noor ka
Maangta phirta hay aankhein har nageenah noor ka

Ab kahaan woh taabishein kaisa woh tarrka noor ka
Mehr ney chhup kar kiya khaasaa o dhundlakaa noor ka

tum muqaabil the to pehron chaand barhta noor ka
tum sey chhut kar moonh nikal aaya zara saa noor ka

Qabr e Anwar kahiye yaa qasr e mo’alla noor ka
Charkh e atlas yaa koi saadah saa qubba noor ka

Aankh mil sakti nahin dar par hay pehra noor ka
Taab hay bey hukm par maarey parindah noor ka

Naza’a mein lautega khaak e dar pey shaida noor ka
Mar key awrhegi uroos e jaan dupatta noor ka

Taab e mehr e hashr sey chaunke nah kushta noor ka
Boondiyaan rehmat ki deney aayin cheenta noor ka

Waz’ e waaze’ mein teri soorat hay ma’na noor ka
Yoon majaazan chaahein jis ko keh dein kalma noor ka

Ambiya ajzaa hain tu bilkul hay jumla noor ka
Is ‘ilaaqe sey hay un par naam sachha noor ka

Yeh jo mehr o mah pey hay itlaaq aataa noor ka
Bheekh tere naam ki hay isti’aarah noor ka

Surmagin aankhein hareem e Haq key woh mushkin ghazaal
Hay fazaaye laa makaan tak jinka ramnaa noor ka

Taab e husn e garm sey khil jaayenge dil key kanwal
Nau bahaarein laayega garmi ka jhalka noor ka

Zar e mehr e quds tak tere tawassut sey gaye
Had e ausat ney kiya sughraa ko kubraa noor ka

Sabzah gardon jhukaa tha behr e paa bos e Buraaq
Phir nah seedha ho saka khaayaa woh kora noor ka

Taab e sum sey chaundhiyaa kar chaand unhein qadmon phira
Hans key bijli ney kahaa dekhaa chalaawaa noor ka

Deed e naqsh e sum ko nikli saat pardon sey nigaah
Putliyaan bolein chalo aaya tamaashaa noor ka

Aks e sum ney chaand sooraj ko lagaye chaar chaand
Par gayaa seem o zar e gardawn pey sikkah noor ka

Chaand jhukjaata jidhar ungli utthaatey mahd mein
Kya hi chaltaa thaa ishaaron par khilona noor ka

Eik seena tak mushaabeh eik wahan sey paaon tak
Husn e Sibtain un key jaamon mein hay neemaa noor ka

Saaf shakl e paak hay donon key milney sey ‘iyaan
Khat tawam mein likha hay yeh do warqah noor ka

Kaaf gesu haa dahan yaa abru aankhein ‘ain saad
Kaaf haa yaa ‘ain saad unkaa hay chehrah noor ka

Aay Raza yeh Ahmad e Noori ka faiz e noor hay
Ho gayi meri ghazal barrh kar qaseedah noor ka

صبح طیبہ میں ہوئی بٹتا ہے باڑا نور کا
صدقہ لینے نور کا آیا ہے تارا نور کا

باغِ طیبہ میں سہانا پھول پھولا نور کا
مستِ بو ہیں بلبلیں پڑھتی ہیں کلمہ نور کا

بارہویں کے چاند کا مُجرا ہے سجدہ نور کا
بارہ بُرجوں سے جھکا ایک اِک سِتارہ نور کا

ان کے قَصْرِ قَدْر سے خُلْد ایک کمرہ نور کا
سِدْرَہ پائیں باغ میں ننھا سا پودا نور کا

عرش بھی فِردوس بھی اس شاہِ والا نور کا
یہ مُثَمَّن بُرج وہ مُشکُوئے اَعلیٰ نور کا

آئی بدعت چھائی ظلمت رنگ بدلا نور کا
ماہِ سُنّت مِہْرِ طَلْعت لے لے بدلا نور کا

تیرے ہی ماتھے رہا اے جان سہرا نور کا
بخت جاگا نور کا چمکا ستارا نور کا

میں گدا تو بادشاہ بھر دے پیالہ نور کا
نور دن دُونا تِرا دے ڈال صدقہ نور کا

تیری ہی جانب ہے پانچوں وقت سجدہ نور کا
رُخ ہے قبلہ نور کا اَبرو ہے کعبہ نور کا

پُشت پر ڈَھلکا سرِ انور سے شَمْلَہ نور کا
دیکھیں موسیٰ طُور سے اُترا صَحِیفہ نور کا

تاج والے دیکھ کر تیرا عِمامہ نور کا
سر جھکاتے ہیں الٰہی بول بالا نور

بِینیِ پُرنور پر رَخشاں ہے بُکّہ نور کا
ہے لِوَاءُ الْحَمْد پر اُڑتا پھَریرا نور کا

مُصْحَفِ عارِض پہ ہے خطِ شَفِیْعَہ نور کا
لو سِیَہ کارو مبارک ہو قَبَالَہ نور کا

آبِ زر بنتا ہے عارِض پر پسینہ نور کا
مُصْحَفِ اِعجاز پر چڑھتا ہے سونا نور کا

پیچ کرتا ہے فدا ہونے کو لَمْعَہ نور کا
گردِ سر پھرنے کو بنتا ہے عِمامَہ نور کا

ہیبت عارض سے تھراتا ہے شعلہ نور کا
کَفشِ پا پر گر کے بن جاتا ہے گُپّھا نور کا

شمع دل مِشکوٰۃ تن سینہ زُجا جَہ نور کا
تیری صورت کے لئے آیا ہے سُورہ نور کا

مَیل سے کس درجہ ستھرا ہے وہ پُتلا نور کا
ہے گلے میں آج تک کورا ہی کُرتا نور کا

تیرے آگے خاک پر جھکتا ہے ماتھا نور کا
نور نے پایا تِرے سجدے سے سِیْما نور کا

تو ہے سایہ نور کا ہر عُضْو ٹکڑا نور کا
سایہ کا سایہ نہ ہوتا ہے نہ سایہ نور کا

کیا بَنا نامِ خدا اَسرا کا دولہا نور کا
سر پہ سہرا نور کا بَر میں شَہانہ نور کا

بزمِ وَحْدَت میں مزا ہو گا دوبالا نور کا
ملنے شمعِ طور سے جاتا ہے اِکّا نور کا

وصفِ رخ میں گاتی ہیں حوریں ترانہ نور کا
قدرتی بِینوں میں کیا بجتا ہے لَہْرا نور کا

یہ کتابِ کُن میں آیا طُرفہ آیَہ نور کا
غیرِ قائل کچھ نہ سمجھا کوئی معنیٰ نور کا

دیکھنے والوں نے کچھ دیکھا نہ بھالا نور کا
مَنْ رَاٰی کیسا یہ آئینہ دکھایا نور کا

صبح کر دی کفر کی سچا تھا مُژدہ نور کا
شام ہی سے تھا شبِ تِیرہ کو دھڑکا نور کا

پڑتی ہے نوری بھرن امڈا ہے دریا نور کا
سر جھکا اے کِشْتِ کفر آتا ہے اَہلا نور کا

ناریوں کا دور تھا دل جل رہا تھا نور کا
تم کو دیکھا ہو گیا ٹھنڈا کلیجا نور کا

نَسْخ اَدیاں کر کے خود قبضہ بٹھایا نور کا
تاجْور نے کر لیا کچا علاقہ نور کا

جو گدا دیکھو لیے جاتا ہے توڑا نور کا
نور کی سرکار ہے کیا اس میں توڑا نور کا

بھیک لے سرکار سے لا جلد کاسہ نور کا
ماہِ نو طیبہ میں بٹتا ہے مہینہ نور کا

دیکھ ان کے ہوتے نازیبا ہے دعویٰ نور کا
مِہْر لکھ دے یاں کے ذرّوں کو مُچَلْکا نور کا

یاں بھی داغِ سجدۂ طَیبہ ہے تَمغا نور کا
اے قمر کیا تیرے ہی ماتھے ہے ٹِیکا نور کا

شمع ساں ایک ایک پروانہ ہے اس با نور کا
نورِ حق سے لو لگائے دل میں رشتہ نور کا

اَنجمن والے ہیں اَنجم بَزم حلقہ نور کا
چاند پر تاروں کے جھرمَٹ سے ہے ہالہ نور کا

تیری نسلِ پاک میں ہے بچہ بچہ نور کا
تو ہے عینِ نور تیرا سب گھرانا نور کا

نور کی سرکار سے پایا دوشالہ نور کا
ہو مبارک تم کو ذُو النُّوْرَیْن جوڑا نور کا

کس کے پردے نے کیا آئینہ اندھا نور کا
مانگتا پھرتا ہے آنکھیں ہر نگینہ نور کا

اب کہاں وہ تابِشیں کیسا وہ تڑکا نور کا
مِہْر نے چھپ کر کیا خاصا دُھنْدَلْکا نور کا

تم مُقابِل تھے تو پہروں چاند بڑھتا نور کا
تم سے چھٹ کر منھ نکل آیا ذرا سا نور کا

قبرِ انور کہیے یا قصرِ مُعلّٰے نور کا
چَرخِ اَطلَس یا کوئی سادہ سا قُبّہ نور کا

آنکھ مِل سکتی نہیں در پر ہے پہرا نور کا
تاب ہے بے حکم پَر مارے پرندہ نور کا

نَزع میں لوٹے گا خاکِ در پہ شیدا نور کا
مَر کے اوڑھے گی عَروسِ جاں دوپٹا نور کا

تابِ مِہرِ حشر سے چونکے نہ کُشْتہ نور کا
بوندیاں رحمت کی دینے آئیں چھینٹا نور کا

وضْعِ واضع میں تِری صورت ہے معنی نور کا
یوں مَجازاً چاہیں جس کو کہہ دیں کلمہ نور کا

اَنبیا اَجزا ہیں تو بالکل ہے جملہ نور کا
اس علاقے سے ہے اُن پر نام سچا نور کا

یہ جو مِہر و مَہ پہ ہے اِطلاق آتا نور کا
بھیک تیرے نام کی ہے اِستِعارَہ نور کا

سُرمَگیں آنکھیں حَریمِ حق کے وہ مُشکِیں غَزال
ہے فضائے لامکاں تک جن کا رَمنا نور کا

تابِ حُسنِ گرم سے کھل جائیں گے دل کے کَنول
نو بہاریں لائے گا گرمی کا جھلکا نور کا

ذرّے مِہرِ قُدس تک تیرے تَوَسُّط سے گیے
حدِّ اَوسَط نے کیا صُغریٰ کو کُبریٰ نور کا

سبزۂ گَردوں جھکا تھا بہرِ پا بوسِ بُراق
پھر نہ سیدھا ہو سکا کھایا وہ کوڑا نور کا

تابِ سم سے چوندھیا کر چاند اُنھیں قدموں پھرا
ہنس کے بجلی نے کہا دیکھا چھلاوا نور کا

دیدِ نقشِ سُم کو نکلی سات پَردوں سے نگاہ
پُتلیاں بولیں چلو آیا تماشا نور کا

عکسِ سم نے چاند سُورج کو لگائے چار چاند
پڑگیا سِیم و زرِ گَردوں پہ سکہ نور کا

چاند جھک جاتا جِدھر اُنگلی اٹھاتے مَہد میں
کیا ہی چلتا تھا اشاروں پر کھلونا نور کا

ایک سینہ تک مُشابہ اک وہاں سے پاؤں تک
حُسنِ سِبطَین ان کے جاموں میں ہے نِیْما نور کا

صاف شکلِ پاک ہے دونوں کے ملنے سے عِیاں
خط تَواَم میں لکھا ہے یہ دو۲ وَرقہ نور کا

کٓ گیسو ٰ ہ دَہن یٰ ابرو آنکھیں عٓ صٓ
کٓھٰیٰعٓصٓ اُن کا ہے چہرہ نور کا

اے رضاؔ یہ احمدِ نوری کا فیضِ نور ہے
ہوگئی میری غَزل بڑھ کر قصیدہ نور کا

???? ????ℯ?? ________________________________
ᴀᴅᴍɪɴ – https://www.facebook.com/OwaisRazvi

Academy Group Only Writer & Poets
https://www.facebook.com/groups/NaatAcademyIndia/

????? ???? ????? ?www.NaatAcademy.com

#OfficialNetwork
#NaatEducation
#NaatLiterature
#NaatLiteracy
#NaatAcademy
#NaatAcademyIndia
#RabiulAwwal2019
#NewNaat2019
#OwaisRazvi
#WeLoveOurProphetMuhammadﷺ
#نعت_گوئی #نعتیہ_شاعری #تعلیم_سخن #نفحات_بخشش
#درودشریف #درودوسلام #یوم_درودوسلام #نعت2019
#نعت_رسول #نعت_نبی #نعت_پاک #منقبت #مدینہ #مکہ
#اویس_رضوی
#مسجدنبوی #رسول_اللہ
#صلی_علیہ_وآلہ_وسلم

Was this article helpful?
YesNo