Skip to main content
Lyricsمنقبت

خدا کے شیر اے مولائے کائنات علی

By May 25, 2019No Comments

خدا کے شیر اے مولائے کائنات علی
شرَف کا گوہر یکتا تری حیات علی
محیط کون ومکاں تیرا جلوہ ہستی
تری چمک سے بھرا ظرف شش جہات علی
پڑے ہیں فکر و نظر کے کلیم حیرت میں
ہیں طور علم پہ تیری تجلیات علی
تو لا جواب ہے جس رخ سے بھی تجھے دیکھا
کہ اک خزینہ عظمت ہے تیری ذات علی
نگاہ کون و مکاں میں نہیں بدل تیرا
ہے بے مثال ترا جوہرصفات علی
خدا کے فضل سے تجھ کو ملی ہے وہ قدرت
زمانہ ہے ترےزیرِ تصرُّفات علی
اشارہ کردو تو نظم جہاں سنور جائے
نظر کرو تو بدل دو مقدرات علی
حدودبزم جہاں تیرے سامنے کوتاہ
وسیع تر تری چشم مشاہدات علی
ترے بغیر ترقی کا ہرسفر ناقص
کہ تیرا عشق ہے ُمہرکمالیات علی
ترا وجود ہے دروازۂ علوم رسول
بسا ہے تجھ میں جہان مکاشفات علی
بنے وہ ذرۂ خاکی حریفِ ماہ و نجوم
پڑی ہے جن پہ تری چشم التفات علی
نہ ہو سکے گی کما حقہُ تری توصیف
خمیدہ سر ہیں زبان و قلم دوات علی
نہ کیوں رکھیں صدف دل میں یہ گہر مومن
کہ تجھ سے عشق و وفا باعث نجات علی
بھنور سے کشتیٔ اسلام پار کر دیجے
کہ اہل حق کے ہوں بہتر معاملات علی
ملا ہے تجھ سے ہر اک گوشۂ حیات کو نور
ہیں رہنما ، ترے اقوال طیبات علی
رواں دواں تری نسلوں میں ہے مہک تیری
کہ مثل گل ہیں تری پاک ذریات، علی
ملی ہے داد سخن اس لئے فریدی کو
زبان و خامہ و دل پر ہے تیری بات علی

فریدی صدیقی مصباحی