Skip to main content
نعت

یوں ہوئی یادِ رخِ محبوب مہمانِ حیات

By August 22, 2021No Comments

یوں ہوئی یادِ رخِ محبوب مہمانِ حیات
آنسو آنسو بن گیا شمعِ فروزانِ حیات


میری جانب بھی بہ شانِ لطف اے جانِ حیاتﷺ
وہ نگاہیں جو بدل دیتی ہیں عنوانِ حیات


کر دیا پُر گوہر مقصد سے دامانِ حیات
یانبیﷺ تم بن کر آئے ابر نبسانِ حیات


تم نے آکر سوزنِ رحمت سے کی بخیہ گری
پارہ پارہ ہوچکا تھا ورنہ دامانِ حیات


زندگی کے آپ نے سمجھائے اسرار و رموز
آپ سے پہلے کسے حاصل تھا عرفانِ حیات


تم نے قیدِ جہل سے بخشی نجاتِ دائمی
ہر نفس تھا خلق کو زنجیرِ زندانِ حیات


اُن کی دُھن، ان کی لگن، ان کی تمنّا، ان کی یاد
مختصر سا ہے مگر کافی ہے سامانِ حیات


تیرے صدقے اے بہارِ فرقتِ کوئے حبیبﷺ
ہے پَھلا پُھولا، خدا رکھے گلستانِ حیات


شانۂ اخلاق سے تم نے سنوارے پیچ و خم
ورنہ تھی اُلجھی ہوئی زلفِ پریشانِ حیات


اے دیارِ مصطفیٰﷺ میں مرنے والے خوش نصیب
کس حَسِیں انداز سے بدلا ہے عنوانِ حیات


موت آئے اُن سنہری جالیوں کے سامنے
بس یہی لے دے کے اب اختؔر ہے ارمانِ حیات

Was this article helpful?
YesNo