Skip to main content
نعت

ہے یہ جو کچھ بھی جہاں کی رونق

By September 7, 2021No Comments

ہے یہ جو کچھ بھی جہاں کی رونق
یا نبی سب ہے تمہاری رونق

عرش و کرسی ہے تمہیں سے روشن
فرش پر بھی ہے تمہاری رونق

دیکھیں طیبہ کو تو رضواں کہہ دیں
ہم نے دیکھی نہیں ایسی رونق

خلد و افلاک مزین ہیں سبھی
پر ہے طیبہ کی نرالی رونق

مسکرا دیجئے یا شاہ کہ ہو
دو جہاں میں ابھی دونی رونق

حورو غلماں ملک و جن و بشر
ہے یہ سب آپ کے دم کی رونق

تم نہیں تھے تو نہیں تھا کچھ بھی
تم نہ ہوتے تو نہ ہوتی رونق

میں ہوں محبوب خدا کا مداح
میری تربت پہ بھی رونق

ایک دن چل کے جمیل رضوی
دیکھیے ان کی گلی کی رونق

قبالۂ بخشش