Skip to main content
نعت

ہے صبحِ ازل تابشِ رخسارِ محمّدﷺ

By August 22, 2021No Comments

ہے صبحِ ازل تابشِ رخسارِ محمّدﷺ
ہے شامِ ابد گیسوئے خمدارِ محمّدﷺ


کر اتنا کرم حسرتِ دیدارِ محمّدﷺ
دنیا مجھے کہنے لگے بیمارِ محمّدﷺ


ہیں فرش سے تا عرشِ بریں جس کی ضیائیں
اللہ رے آئینۂ رخسارِ محمّدﷺ


ہے قربِ خدا سرورِ عالم کی غلامی
محبوب خدا کا ہے طلب گارِ محمّدﷺ


دیتا ہے خدا ان کو، یہ دیتے ہیں جہاں کو
دنیا ہے حقیقت میں نمک خوارِ محمّدﷺ


رضواں! مری جنت تو یہی ظلِّ خدا ہے
رہنے دے تہِ زلفِ کرم بارِ محمّدﷺ


صدقے تِرے تو نے مِری ہر پیاس بجھائی
اے تشنگئ جلوۂ رخسارِ محمّدﷺ


در اصل کشش ہے یہ فقط ارضِ حرم کی
لے آیا تخیّل سرِ دربارِ محمّدﷺ


سرمایۂ ایمان ہے جھولی میں گدا کی
جنت کا خریدار ہے نادارِ محمّدﷺ


صرف ایک مقامِ احدیّت کے علاوہ
ہر رتبۂ عالی ہے سزاوارِ محمّدﷺ


اختؔر یہ فقط فیضِ رضؔا، لطفِ ضیؔا ہے
ہر شعر میں ہے رنگِ چمن زارِ محمّدﷺ

Was this article helpful?
YesNo