Skip to main content
نعت

ہے تشنۂ تکِمیل مدینے کی تمنّا

By August 21, 2021No Comments

ہے تشنۂ تکِمیل مدینے کی تمنّا
اے مَوت ابھی اور ہے جینے کی تمنّا


بس ایک تمنّا ہے قرینے کی تمنّا
وہ صرف تمنّا ہے مدینے کی تمنّا


اللہ غنی رفعتِ ایوانِ محمّدﷺ
ہے عرشِ الہٰی کو بھی زینے کی تمنّا


دو بُوند ملے ساغرِ مَازَاغ سے ساقی
بَس اور نہیں کچھ مجھے پینے کی تمنّا


قِسمت سے مِلا آمنہ کا لعلِ درخشاںﷺ
تھی مُہرِ رسالتﷺ کو نگینے کی تمنّا


دیکھا کہ ہیں سرکارِ عرب ساقئ کوثرﷺ
رِندوں کو ہوئی اور بھی پینے کی تمنّا


صد پارہ ہوں یوں دامنِ دل ہجرِ نبیﷺ میں
ہو ’’بخیہ گرِدصل‘‘ کو سینے کی تمنّا


ہے تشنہ دہن آج لبِ چشمۂ رحمت
لائی ہے کہاں کھینچ کے پینے کی تمنّا


ہم خوب سمجھتے ہیں تمنّا تِری اختؔر
مَرکر تجھے طیبہ میں ہے جینے کی تمنّا

Was this article helpful?
YesNo