Skip to main content
نعت

ہُوں شرمسار فرومائیگی پہ جانِ حیات

By August 22, 2021No Comments

ہُوں شرمسار فرومائیگی پہ جانِ حیات
حضورﷺ نذر کو لایا ہوں ارمغانِ حیات


یہیں سے مردہ دلوں کو مِلا نشانِ حیات
ہے ذرّہ ذرّہ مدینے کا آستانِ حیات


ہزار جان تصدّق شہیدِ ہجرِ حبیبﷺ
ہے تیری رگ میں پوشیدہ کل جہانِ حیات


یونہی چھلکتے رہیں چشمِ تَر کے پیمانے
نہ کم ہو تشنگی شوقِ دیدِ جانِ حیات


ہر اک سانس ہے مظہر تمہاری رحمت کا
کہاں یہ شانِ کرم اور کہاں زبانِ حیات


تمھاری ذاتِ مجسّم دلیلِ ہستی ہے
تمھارا نام حقیقت میں ہے نشانِ حیات


مسیح کعبہ و بطحا کے مرنے والوں پر
قسم خدا کی اَجَل کو بھی ہے گمانِ حیات


خود آشنا و خدا آشنا نہ ہم ہوتے
نہ ہوتی ذاتِ گرامی جو درمیانِ حیات


ضرور لائیں گے تشریف صاحبِ معراج
بنے گی قبر ہماری بھی لامکانِ حیات


کچھ اور تیز قدم اضطرابِ جذبۂ شوق
رُکے دیارِ مدینہ یہ کاروانِ حیات


بس ایک حدِ تنفّس ہے درمیاں اختؔر
ذرا بھی دور نہیں آستانِ جانِ حیات

Was this article helpful?
YesNo