Skip to main content
نعت

ہوتے ہی قیدِ تن سے رہا اپنے گھر گئی

By August 23, 2021No Comments

ہوتے ہی قیدِ تن سے رہا اپنے گھر گئی
مہجور روح تا درِ خیر البشر گئی


بارانِ اشکِ غم میں نہا کر سنور گئی
کچھ اور بھی عروسِ تمنّا نِکھر گئی


اللہ ری بہشتِ مدینہ تِری بہار
ہر گُل جناں بکف تھا جہاں تک نظر گئی


فرمایا جو کلام وہ وحیِ خدا ہوا
کی آپ نے جو بات وہ دل میں اُتر گئی


طیبہ کی سمت لے کے درودوں کے ہار پھول
دلہن بنی ہوئی مِری آہِ سحر گئی


کھولی جو زلف آپ نے گلشن مہک اٹھے
شانہ کیا تو کاکلِ ہستی سنور گئی


اختؔر ہے میرے ہاتھ میں دامانِ مصطفیٰﷺ
دنیا سنور گئی مِری عقبیٰ سنور گئی

Was this article helpful?
YesNo