Skip to main content
نعت

ہر گوشہ شہِ دیں کی ردائے یمنی کا

By August 21, 2021No Comments

ہر گوشہ شہِ دیں کی ردائے یمنی کا
اِک ظلِّ حسیں ہے کرمِ ذوالمننی کا


عرفاں تو نہیں ہے مجھے شِیریں سخنی کا
مدّاح ہوں لیکن میں رسولِ مدنیﷺ کا


مدّاح ہوں دندانِ اویسِ قرنی کا
سرکار! کہاں منہ ہے یہ دُرِّ عدنی کا


کانٹے بھی ہیں صحرائے عرب کے متبسّم
اعجاز ہے یہ تیری شگفتہ دہنی کا


اے رہروِ ہستی! وہ مدینے کی ہے منزل
جس راہ میں احساس نہیں پاشِکنی کا


ہے طُرفہ خنک سوزِ فراقِ نبویﷺ بھی
یارو عجب عالم ہے دلِ سوختنی کا


حل کر دیا تم نے شبِ معراج یہ عقدہ
جلوہ نہیں محتاج سوالِ اَرِنِی کا


میں نعتِ نبیﷺ روز نئی کہتا ہوں اختؔر
ملتا ہے صِلہ مجھ کو میری نغمہ زنی کا

Was this article helpful?
YesNo