Skip to main content
نعت

گفتگو کر نور کی نورِ خدا کی بات کر

By September 1, 2020No Comments

گفتگو کر نور کی نورِ خدا کی بات کر
ہم سے کرنی ہے اگر تو مصطفی کی بات کر

اے امیرِ شہر مفلس کو بھی سینے سے لگا
میرے آقا کو جو بھائے اُس ادا کی بات کر

تزکرہ شہرِ مدینہ کا زرا کر جھوم کے
گنبدِ خضرا سے آئے اُس ہوا کی بات کر

تیری سُلطانی کے قصّے یار تیرے پاس رکھ
عشقِ سرور میں جو جھومیں اس گدا کی بات کر

مردِ مومن خوف کھانا تیری فطرت میں نہیں
باطلوں سے سر اٹھا کر مرتضی کی بات کر

تیرے قدموں کی رسائی چاند تک محدود ہے
لامکاں تک جانے والے نقشِ پا کی بات کر

کیا بیاں کر پائے گا توصیف تو ان کی فرؔاز
نعت کی ہے بات تو احمد رضا کی بات کر

کلام : احمد فراز

#NaatAcademy

#OwaisRazvi