Skip to main content
نعت

کیوں کر نہ ہو مکے سے سوا شان مدینہ

By September 7, 2021No Comments

کیوں کر نہ ہو مکے سے سوا شان مدینہ
وہ جب کہ ہوا مسکن سلطان مدینہ

مکے کو شرف ہے تو مدینے کے سبب سے
اس واسطے مکہ بھی ہے قربان مدینہ

ہوتا ہے فلک کا سرِ تسلیم یہاں خم
اللہ رے بلندی تری ایوان مدینہ

آتے ہیں سر عجز جھکائے ہوائے لاکھوں
شاہانِ جہاں پیش گدایان مدینہ

بلبل کبھی بھولے سے نہ لے نام چمن کا
دیکھاہی نہیں اس نے گلستان مدینہ

لاکھوں نے لگگائے ہیں ترے کوچہ میں بستر
تھوڑی سی جگہ ہم کو بھی اے جان مدینہ

پہنچادے تو محبوب کے درپر مجھے یا رب
لے جاؤں نہ د نیا سے میں ارمانِ مدینہ

سمجھوں گا ہوئی عید مبارک مجھے جس دم
ہوجائے گا یہ سر مرا قربان مدینہ

اترا تی ہے کیوں بادصبا تو مرے آگے
دیکھیں گے کبھی ہم بھی گلستانِ مدینہ

سردے کے غلامان نبی راہ خدا میں
آرام سے سوئے تہِ دامان مدینہ

شاہان جہاں کانپتے ہیں نام سے تیرے
اللہ یہ صولت تری سلطان مدینہ

کیا وصف کروں خوبیِٔ اخلاق کا ان کے
بے مثل ہے دنیا میں ہر انسان مدینہ

سرسبز کسی کی بھی نہ ہو کشت تمنا
برسے نہ اگر خلق پہ نیسان مدینہ

مخلوق خداوند ہے سب زیر حکومت
ہے حاکم کونین سلیمان مدینہ

آرام سے ٹھہراتا ہے زوّار نبی کو
گویا کہ یہ چھوٹا ساہےا حسان ِمدینہ

پیش آتے ہیں رحمت کے فرشتے بتواضع
اللہ کے مہمان ہیں مہمان مدینہ

ہوجائے جو سرکار کی رحمت کا اشارہ
سگ اپنا بنا ئیں مجھے دربان مدینہ

مرنے پہ بھی چھوڑیں گے نہ محبوب کا کوچہ
عشاق کی جنت ہے بیابان مدینہ

گھبرائیں گے سب مہر قیامت کی تپش سے
بے خوف مگر ہوں گے گدایان مدینہ

سبطین کی جب حشر میں آئے گی سواری
غل ہوگا کہ وہ آتے ہیں خوبان مدینہ

ہے عرض جمیل رضوی کا یہ خلاصہ
لاشہ ہو مرا اور بیابان مدینہ

عشاق یہ کہتے ہیں جمیل رضوی کو
ہے نغمہ سرا بلبل بستان مدینہ

قبالۂ بخشش