Manqabatمنقبت

کوئ بَدَل نہیں، صدّیقی کارناموں کا

By February 3, 2021No Comments

Shaan e Siddiq e Akbar

Koyi Badal Nahi’n Siddiqui,Karnamo’n Ka
Nabi Ne Mana Hai Ahsaan Un Ke Kamo’n Ka

Wo Yaar E Ghaar,Wo Siddiq,Wo Rafiq E Rasool
Zubaan E Dehr Pe Charcha Hai Un Ke Namo’n Ka

Nabi Ke Baad ,Khllayiq Mai’n Afzal O Bartar
Wo Hai Imaam,Zamane Ke Sab Imamo’n Ka

Farogh Pati Hai Jis Se Sadaqato’n Ki Nazar
Ajab Khumaar Hai Us Maikade Ke Jamo’n Ka

Bulandiya’n Jo Khuda Aur Nabi Ne De’n Un Ko
Na Ho Sake Ga Humai’n Dark Un Maqamo’n Ka

Boht Sanbhl Ke Hum Us Zaat Par Zuba’n Khole’n
Mu’aamla Hai Ye Had Darja Ahtramo’n Ka

Chamak Raha Hai Hilaal E Khalifa E Awwal
Ghubaar Charh Na Saka Is Pe Ittehamo’n Ka

Jaha’n Pe Hazrat E Bu Bakr Jalwah Farma Hai’n
waha’n Duroodo’n Ka Naghma Hai Aur Salamo’n Ka

Waha’n Se Lete Hai’n Kheraat,Aftaab O Qamar
K Noor Aisa Hai Us Dar Ki Subho’n, Shamo’n Ka

Malak Waha’n Gul e Fidous Le Ke Aate Hai’n
Waha’n Hai Silsilah Allah K Payamo’n Ka

Waha’n Rasool O Sahaba Ki Midhato’n Ki Hai Gonj
Guzar Nahi’n Hai Waha’n Be adab Kalamo’n Ka

Jo Yaar E Ghaar Tha,Yaar E Mazaar Hai Ab Bhi
Wohi To Markaz E Ulfat Hai Hum Tamamo’n Ka

A Jalne Walo! A Naar E Jaheem Ke Kutto!
Tumhai’n Naseeb Nahi’n Sath Zul Kiramo’n Ka

Waha’n Rasayi Hai Bas Gul Sift Nigaho’n Ki
Waha’n Guzar Nahi’n Tum Jaise Khar Famo’n Ka

Zuban Kholo Gy Tum Kya Kisi Ki Izzat Par
Khula Hai Band Tumhare Hi Paijamo’n Ka

Saza Zuroor Mile Gi Tumhai’n Ahanat Ki
Hisaab Ho Ga La’eeno’n Ka Be Lagamo’n Ka

Zame’n Ko Paak Kiya Jaye Un Ke Baghi Se
Yehi Ilaaj Hai Sare Namak Haramo’n Ka

Baro’n Ki Izzat O Hurmat Pe Dai’n Sada Pehra
Fareedi! Hai Ye Fareza Sabhi Ghulamo’n Ka

Kalaam:
Fareedi Siddiqui Misbahi

شانِ صدیق اکبر رضی اللہ عنہ

خلیفۂ اول ، یار غار نبی حضرت سیدنا ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کی مدحت اور ان کے گستاخوں کی مذمت
– – – – – –

کوئ بَدَل نہیں ، صدّیقی کارناموں کا
نبی نے مانا ہے احسان اُن کے کاموں کا

وہ یارِ غار ، وہ صدیق ، وہ رفیقِ رسول
زبانِ دہر پہ چرچا ہے ان کے ناموں کا

نبی کے بعد ، خلائق میں افضل و برتر
وہ ہے امام ، زمانے کے سب اماموں کا

فروغ پاتی ہے جس سے صداقتوں کی نظر
عجب خمار ہے اُس میکدے کے جاموں کا

بلندیاں جو خدا اور نبی نے دیں اُن کو
نہ ہو سکے گا ہمیں دَرک اُن مقاموں کا

بہت سنبھل کے ہم اُس ذات پر زباں کھولیں
معاملہ ہے یہ حد درجہ احتراموں کا

چمک رہا ہے ہلالِ خلیفۂ اول
غُبار چڑھ نہ سکا اُس پہ اِتّہاموں کا

جہاں پہ حضرتِ بوبکر جلوہ فرما ہیں
وہاں درودوں کا نغمہ ہے اور سلاموں کا

وہاں سے لیتے ہیں خیرات ، آفتاب و قمر
کہ نور ایسا ہے اُس در کی صبحوں ، شاموں کا

مَلَک وہاں گلِ فردوس لے کے آتے ہیں
وہاں ہے سلسلہ اللہ کے پیاموں کا

وہاں رسول و صحابہ کی مدحتوں کی ہے گونج
گزر نہیں ہے وہاں بے ادب کلاموں کا

جو یارِ غار تھا ، یارِ مزار ہے اب بھی
وہی تو مرکزِ الفت ہے ہم تماموں کا

اے جلنے والو ! اے نارِ جَحیم کے کُتّو !
تمہیں نصیب نہیں ساتھ، ذوالکِراموں کا

وہاں رَسائ ہے بس گُل صفت نگاہوں کی
وہاں گزر نہیں تم جیسے خارفاموں کا

زبان کھولو گے تم کیا کسی کی عزت پر
کُھلا ہے بَند ، تمہارے ہی پائجاموں کا

سزا ضرور ملے گی تمہیں اہانت کی
حساب ہوگا لعینوں کا ، بے لگاموں کا

زمیں کو پاک کیا جائے اُن کے باغی سے
یہی علاج ہے سارے نمک حراموں کا

بڑوں کی عزت و حرمت پہ دیں سدا پہرا
فریدی ! ہے یہ فریضہ سبھی غلاموں کا

خار فام.. کانٹے جیسا بدن

از فریدی صدیقی مصباحی مسقط عمان

https://www.instagram.com/p/CK0V3XyBF5k/