Skip to main content
نعت

کلسِ گنبدِ خضریٰ ہے مہِ عیدِ نظر

By August 22, 2021No Comments

کلسِ گنبدِ خضریٰ ہے مہِ عیدِ نظر
آج نِکلا ہے کہیں حوصلۂ دیدِ نظر


تِرے ذرّات کو حاصل ہے شعورِ جلوہ
ہم بھی ہیں خاکِ عرب طالبِ تجدیدِ نظر


تابِ نظارہ پہ ہے آیۂ مَازَاغ گواہ
تا نہ اے صاحبِ معراج ہو تردیدِ نظر


ختم ہوتا ہے جو بابِ کرم آقاﷺ پر
کتنا پاکیزہ ہے افسانۂ امیدِ نظر


بارِ جلوہ نہ ہو زنہار تِری بے تابی
شوقِ نظارہ سے ہر بار ہے تاکیدِ نظر


قصۂ ہجر کا آغاز ابھی باقی ہے
اشکِ حسرت تو ہیں منجملۂ تمہیدِ نظر


اللہ اللہ رے خورشیدِ شفاعت کا طلوع
بن گئی صبحِ قیامت سحرِ عیدِ نظر


دامنِ رحمتِ حق ہے سرِ عالم پہ دراز
ہے گھنی چھاؤں تِری دھوپ بھی خورشیدِ نظر


عیدِ نظارۂ وحدت ہوئی آنکھوں کو نصیب
ہے ضیا بار حِرا سے مہِ توحیدِ نظر


روضۂ مہرِ دنیٰ پیشِ نظر ہے اختؔر
آج کس بُرج میں تابندہ ہے ناہیدِ نظر

Was this article helpful?
YesNo