Skip to main content
نعت

کعبہ سے نور کبریا اک ہے اُدھر اک ہے اِدھر

By August 28, 2021No Comments

اک ہے اُدھر اک ہے اِدھر

کعبہ سے نور کبریا اک ہے اُدھر اک ہے اِدھر
طیبہ سے نور مصطفیٰﷺ اک ہے اُدھر اک ہے اِدھر
مکہّ جلال کبریا طیبہ جمال مصطفیٰﷺ
دونوں حرم ہیں باخدا اک ہے اُدھر اک ہے اِدھر
ہاں چاند بھی  قرباں ہوا میرے نبیﷺ کے حسن پر
ٹکڑوں میں جب وہ بٹ گیا اک ہے اُدھر اک ہے اِدھر
آقا کا رعب و حسن بھی حسنین کو کیسا ملا
دونوں شبیہ مصطفیٰﷺ اک ہے اُدھر اک ہے اِدھر
کتنی اندھیری رات تھی ٹہنی جو ان کے ہاتھ تھی
روشن اُسے جب کر دیا اک ہے اُدھر اک ہے اِدھر
یوں مشرکوں کی فوج کے لاشے پڑے تھے بدر میں
جو آپﷺ نے فرما دیا اک ہے اُدھر اک ہے اِدھر
حافؔظ ترا انداز یہ شاید قبول عام ہے
کیسا عجب ہے قافیہ اک ہے اُدھر اک ہے اِدھر
(۱۲ صفر ۱۴۳۸ھ/ ۱۳ نومبر ۲۰۱۶ء)

داتا دربار لاہور جاتے ہوئے ٹرین میں کہی

Was this article helpful?
YesNo