Skip to main content
منقبت

واہ کیا خوب رضا ہم پہ اجالا تیرا

By October 1, 2021No Comments

واہ کیا خوب رضا ہم پہ اجالا تیرا
بدرِ کامل سے لرزتا نہیں تارا تیرا

وجہِ تجدیدِ محبت ہے تڑپنا تیرا
صبحِ صادق کی نمو رات سے لڑنا تیرا

اُلفتِ آلِ محمدﷺ ہے خزینہ تیرا
حُبِ اصحاب پیمبر ہے وظیفہ تیرا

عشقِ سرکار میں کس جا نہیں شہرہ تیرا
یہ زمیں کیا ہے فلک چاہنے والا تیرا

مسلکِ عشق کا ہے روشنی بردار تو ہی
پھر مقیّد نہ رہے کیوں یہ زمانہ تیرا

تجھ سے حاصل ہوئے دستورِ حیاء کے موتی
میری طلعت کی حقیقت ہے چمکنا تیرا

تیرے دربارِ گہربار کی رونق ہے عجب
یہاں خورشید نظر آتا ہے ذرّہ تیرا

اس چمک والے نے رنگت تجھے ایسی بخشی
راستہ صاف دکھا دیتا ہے سایہ تیرا

تیری آمد سے ہے کافور شبِ تیر کا غم
دور حاضر کا تو سورج ہے اجالا تیرا

چڑھتے سورج کو تو ڈھلتے ہوئے دیکھا سب نے
روز بڑھتا ہے دل افروز اجالا تیرا

تجھ سے منسوب ہوئی جگ میں تمازت حق کی
شہر باطل کے لیے خوب شرارہ تیرا

دل ہے مغلوب تو ذہنوں نے جبیں سائی کی
کیسے پیاروں کو ہے پیارا درِ والا تیرا

چند پیمانوں میں ہی لوگ چھلک اٹھتے ہیں
زورِ میخانہ سے بھرتا نہیں کانسہ تیرا

کھل ہی جاتے ہیں سبھی رازِ محبت اس پر
پار لگتا ہے شہا ڈوبنے والا تیرا

علم نازاں ہے رضا قوتِ بازو پہ تیرے
شیر ڈرتا ہے بہت دیکھ کے پنجہ تیرا

نور دیتی ہے زمانے کو تری تحریریں
آج ہم دیکھ رہے ہیں سبھی دیکھا تیرا

تیرے اشعار تو لگتے ہیں مجھے الہامی
بحرِ ادراک بھی ہے محوِ تماشہ تیرا

سب نے تسلیم کیا رفعتِ علمی کو تیری
دل کے جُزدان میں رکھتے ہیں فتاویٰ تیرا

صدقہِ غوث، عطا علم کی خیرات مجھے
قصر عرفان پہ اُڑتا ہے پھریرا تیرا

ان کے منگتوں کی حضوری میں جھکے ہیں سرور
” نان پارہ“ نے یہی درس سکھایا تیرا

اے رضا حسنِ شب و روز بنادے مجھ کو
کیسے ممکن یہ نہیں، غوث ہے آقا تیرا

تیرے اوصافِ حمیدہ کی تو ہے کثرت پر
مجھ کو اندازِ محبت ہے نرالا تیرا

تیری سرکار سے اختر کا میں صدقہ چاہوں
جو میرا پیر ہے اور لاڈلہ بیٹا تیرا

اس کے اشکوں کے تبسم کی حفاظت فرما
سینکڑوں تاروں میں اک چاند ہے تنہا تیرا

بلبلِ باغِ رضا کا ہو چہکنا جیسے
اے سراجِ دلِ حسرت یہ دھڑکنا تیرا

از قلم: محمد سراج قادری (مالیگاؤں)