Skip to main content
منقبت

نہ گُل کی تمنا نہ شوقِ چمن ہے​

By August 23, 2020No Comments

نہ گُل کی تمنا نہ شوقِ چمن ہے​
یہ دل حُبِ آلِ نبی میں مگن ہے​

حسین و حسن ہیں وہ پیکر کہ جن میں​
بتولی نجابت رسولی چلن ہے​

میرے سر کو سودائے زھرا و حیدر​
میرے دل میں عشقِ رسولِ ضمن ہے​

تصور میں ہیں میرے سجاد و زینب​
نگاہوں میں روئے حسین و حسن ہے​

سکینہ کی وہ پیاس وہ ضبطِ گریہ​
کہ نہرِ فرات آج بھی نوحہ زن ہے​

وہ معصوم اصغر کی معصوم ہچکی​
اسی غم کے سکتے میں چرخِ کہن ہے​

لہو میں ادھر تُو نہایا ہے اصغر​
ادھر تیرا بابا بھی خونی کفن ہے​

نہ بھولے گی زینب کو شام غریباں​
کہ بھائی کو کھو کر لُٹی اک بہن ہے​

زینب جو کل تھی مدینے کی مالک​
وہ اب کربلا میں غریب الوطن ہے​

کہا ماں نے اکبر کے قاتل سے رُک جا​
شبیہہ محمّد ہے نازک بدن ہے​

یہ کیوں محوِ گریہ ہے محفل کی محفل​
یہاں کیا کوئی ذکرِ دارو رسن ہے​

دکھا دے جھلک اب تو اے ماہِ زھرا​
شہہ منتظر ، منتظر انجمن ہے​

کِھلے پھول ہیں جس میں زھرا کے ہر سو​
محمّد کا بھی کیا مہکتا چمن ہے​

ستم سہہ کے بھی انکے تیور نہ بدلے​
وہی تمکنت ہے وہی بانکپن ہے​

حسین ابنِ زھرا کا مکھڑا تو دیکھو​
علی کی وجاہت ہے نبی کی پبھن ہے​

ثناء کیجئے کھل کے آل عباء کی​
کہ ذکر انکا خود آبروئے سخن ہے​

نہ کیوں مجھ پر اترائے معجز بیانی​
کہ منہ میں علی کا لعابِ دھن ہے​

نصیر اب میں کیوں مانگنے دور جاؤں​
یہ میں ہوں یہ دروازہ پنجتن ہے​

فرمُودۂ الشیخ پیرسیّدنصیرالدّین نصیرؔ جیلانی،
رحمتُ اللّٰه تعالٰی علیہ، گولڑہ شریف