Skip to main content
نعت

نوُرِ حُضور سے بنے، اَرض و فلک الگ الگ

By September 6, 2021No Comments

نوُرِ حُضور سے بنے، اَرض و فلک الگ الگ
جِنّ و بشر جُدا جُدا، حور و مَلَک الگ الگ

اصل انہی کی ذات ہے، جملہ نبی طفیل ہیں
ایک سے سو دئیے جلیں سب کی چمک الگ الگ

شمس و قمر کی یہ جِلا، عقل و بصر میں یہ ضیاء
سب میں وہ ایک نور ہے، سب کی جھلک الگ الگ

باغِ جہاں کی ہر کلی، اُن کے ہی فیض سے  کِھلی
رنگ ہر ایک کا ہے جُدا، سب کی مہک الگ الگ

ممکن و مظہرِ  وجوب، حادث و پَر توِ قِدَمْ
چاروں ہی رنگ ایک میں ، جیسے دھنک الگ الگ

فوقِ کمالِ عبدیّت، تحت ظِلالِ حقیقت
رہتی ہے آنکھ درمیاں، دونوں پَلَک الگ الگ

فرشِ زمیں پہ کیوں رہے، عرشِ بریں پہ کیوں گئے
چاندنی اُن کے فیض کی، جائے چنک الگ الگ

نائبِ غوث و مصطفٰیﷺ، عبد السلام اور رضا
بُرہاںؔ تو اختیار کر، دونوں جھلک الگ الگ