Skip to main content
نعت

نوشہ کی کب آتی ہے سواری

By August 25, 2021No Comments

ظہورِ قدسی

نوشہ کی کب آتی ہے سواری
ہے سب کی زبانِ دل پہ جاری
وا، سب کی ہیں بیقرار آنکھیں
دولہا پہ ہوں کب نثار آنکھیں
تارے ہیں جھکے زمیں کی جانب
دیدار کا ماہتاب طالب
اشجار بھی سرو قد کھڑے ہیں
خاموش، ادب سے سر جھکے ہیں
نرگس کی کھلی ہوئی ہیں آنکھیں
شبنم سے دُھلی ہوئی ہیں آنکھیں
ہیں چشم براہ غنچہ و گل
قمری ہے خموش، چپ ہے بُلبل
دولہا کی سواری کب ہے آتی
بیتاب کھڑا ہے ہر براتی
انگڑائیاں رات لے رہی ہے
کچھ شب ہے تو کچھ سحرا بھی ہے
دنیا پہ ہے اِک سکوت طاری
مائل ہوا لطفِ خاص باری
ہے اَوج پر کوکبِ دو شنبہ
آئی سحرِ شبِ دو شنبہ
وہ مرغ، وہ جبرئیل انور
پَر آمنہ کے شکم سے مَل کر
کرنے لگے با ادب گزارش
ہو ابرِ کرم، کرم کی بارش
کونین کی بزم سج چکی ہے
جلوے کو نظر ترس رہی ہے
یاسید المرسلینﷺ، اظہر
یارحمتِ عالمینﷺ، اظہر
پردے سے حضورﷺ باہر آئیں
بیتاب ہیں منتظر نگاہیں
باجاہ و حشم، باشان و شوکت
ظاہر ہوئے سرورِ رسالتﷺ

Was this article helpful?
YesNo