Skip to main content
نعت

نورِ حق جلوہ نما تھا مجھے معلوم نہ تھا

By September 8, 2021No Comments

نورِ حق جلوہ نما تھا مجھے معلوم نہ تھا
شکلِ انساں میں چھپا تھا مجھے معلوم نہ تھا

بارہا جس نے کہا تھا اَنَا بَشَرٌاس نے
مَن دَاٰنِیْ بھی کہا تھا مجھے معلوم نہ تھا

بکریاں جس نے چرائیں تھیں حلیمہ تیری
عرش پر وہی گیا مجھے معلوم نہ تھا

جس نے امت کیلئے رو کے گزاریں راتیں
وہ ہی محبوبِ خدا تھا مجھے معلوم نہ تھا

چاند اشارے سے پھٹا حکم سے سورج لوٹا
مظہرِ ذاتِ خدا تھا مجھے معلوم نہ تھا

دیکھا جب قبر میں اس پردہ نشیں کو تو کھُلا
دل سالکؔ میں رہا تھا مجھے معلوم نہ تھا

Leave a Reply