Skip to main content
نعت

نزول عرشِ معلّٰی سے بہاروں کا

By August 21, 2021No Comments

نزول عرشِ معلّٰی سے بہاروں کا
پھر آج سوئے حرم رُخ ہے بادہ خواروں کا


کہاں نباہ ہے ہم آفتوں کے ماروں کا
درِ حضورﷺ سہارا ہے بے سہاروں کا


فضول ذکر ہے فردوس کی بہاروں کا
نظر نواز ہے جلوہ عرب کے خاروں کا


ہیں سجدہ ریز حبیبِ خداﷺ کے کوچے میں
دماغ عرشِ بریں پر ہے خاکاروں کا


یہی اِک آس حضوری کا اب سہارا ہے
کہ تم نے دل نہیں توڑا امیدواروں کا


ہیں زیرِ سایۂ زلفِ حبیب محشرﷺ میں
کوئی یہ اوج تو دیکھے سیاہ کاروں کا


خود اپنے دستِ کرم سے پلا رہے ہیں حضورﷺ
اِک ازدحام ہے کوثر پہ مَے گساروں کا


کچھ ایسی شانِ کرم حشر میں تھی آقا کی
نظر اٹھی تو بھَلا ہوگیا ہزاروں کا


رضؔا کا لطف و کرم کیوں نہ تجھ پہ ہو اختؔر
کہ تو غلام ہے خادم ہے چار یاروں کا

Was this article helpful?
YesNo