Skip to main content
نعت

میں مدینے کو چلا زائر روضہ ہو کر

By August 27, 2021No Comments

زائر روضہ

میں مدینے کو چلا زائر روضہ ہو کر
کِھل گیا غنچہء دل کیسا شگفتہ ہو کر
اسکی خوشیوں کا کہیں کوئی ٹھکانہ ہی نہیں
جو کوئی گھر سے چلا عازم طیبہ ہو کر
در آقاﷺ پہ جمائیں جو نگاہیں میں نے
دل چمکنے لگا پھر خوب مجلاّ ہو کر
در سرکار سے پائے جو ہزاروں تحفے
میں تو پھولا نہ سمایا ہوں شگفتہ ہو کر
میں مدینے میں رہوں آپکا نوکر بن کے
اور ٹھکانے سے لگوں خاک مدینہ ہو کر
قافلے والو رکو اتنی بھی جلدی کیا ہے
میں ذرا سانس تو لوں سوئے مدینہ ہو کر
جب سے انوار مدینہ میں دھلا ہے حافؔظ
تو وہ ذرہّ ہے جو چمکا ہے نگینہ ہو کر
(۲۰ فروری ۲۰۱۷۔ ۲۲ جمادی الاوی ۱۴۳۸ھ) نزیل مدینہ

Was this article helpful?
YesNo