Skip to main content
نعت

میرا دردِ جگر کارگر ہوگیا

By August 18, 2021No Comments

میرا دردِ جگر کارگر ہوگیا
منتظر تھا مگر منتظر ہوگیا


سارا عالم سمٹ کے اُدھر آگیا
تیرا رخ جانِ عالم جدھر ہوگیا


تیری ناراضگی باعثِ مرگ ہے
موت کیسی؟ ہمارا تو گر ہوگیا


میری آنکھوں کو معراج سی مل گئی
جب سے تر آپ کاسنگ در ہوگیا


اے غمِ ہجر احمد ترا شکریہ
وجہ تسکین دردِجگر ہوگیا


کیوں نہ دل میرا اب خانہ نور ہو
آمنہ کے دلارےﷺ کا گھر ہوگیا


خلد کی ساری رنگینیاں ہیچ ہیں
گلشن یار پیش نظر ہوگیا


جس طرف دیکھئے نور ہی نور ہے
نازشِ مہرو مہ جلوہ گر ہوگیا


میری جانب نظر کا اٹھانا ہی تھا
بخت اخؔتر بھی رشک قمر ہوگیا

Was this article helpful?
YesNo