Skip to main content
نعت

مرحبا صلِّ علیٰ عزمِ کلیمانۂ دل

By August 22, 2021No Comments

مرحبا صلِّ علیٰ عزمِ کلیمانۂ دل
ہے حبیبی اَرِنی نعرۂ مستانۂ دل


نغمۂ درد ہے یا قصّۂ جانانۂ دل
مطلعِ نعت ہے یا سرخئ افسانۂ دل


رُخ ہے کعبہ کی طرف ہاتھ مدینے کی طرف
کتنا شاہانہ اندازِ گدایانۂ دل


شانۂ پنجۂ قدرت سے سنورنے والے
گیسوئے نور کہاں؟ اور کہاں شانۂ دل


یادِ کعبہ کے فدا، حسرتِ طیبہ کے نثار
آج مکّہ بھی، مدینہ بھی کاشانۂ دل


داغِ ہجرِ مدنی چاند تِری عمر دراز
جگمگاتا ہی رہے تجھ سے نبی خانۂ دل


بادۂ عشقِ محمّدﷺ سے ہے لبریز مگر
کبھی چھلکا نہیں اختؔر مِرا پیمانہ دل

Was this article helpful?
YesNo