Skip to main content
نعت

محمد محمد پکارے چلا جا

By August 14, 2021No Comments

 
محمد محمد پکارے چلاجا
محمد کا نغمہ سنائے چلاجا

درودی ترانے تُو گائے چلاجا
دلِ مضمحل کو سنبھالے چلاجا

میرے قلب محزوں کی تسکیں یہی ہے
جو جلتا ہے اُس کو جلائے چلاجا

وسیلے سے اُن کے سہارے سے اُن کے
تو بگڑی کو اپنی بنائے چلاجا

زمانہ خفا ہے تو کیا غم ہے اُس کا
زمانے کو ٹھوکر لگائے چلاجا

زمانہ ایک دن تیرے ساتھ ہوگا
تو آقا کو اپنے سنائے چلاجا

دو عالم کی نعمت وہیں سے ملے گی
تو دامن کو اپنے پسارے چلاجا

مدینے کے راہی خدا تیرا حافظ
خدا کی مدد کے سہارے چلاجا

سفینے کو تیرے کنارے لگائیں
یہ لہریں یہ موجیں بہ دھارے چلاجا

ترے درد دل کی دوا بس یہیں ہے
چلاجا وہیں غم کے مارے چلاجا

نگار مدینہ گلستان جنت
مدینے کو دل میں بسائے چلاجا

مدینے کے خاروں پہ قربان گلشن
انہیں اپنے دل میں اتارے چلاجا

ترے پاؤں اور یہ مدینے کے ذرے
مسافر نظر کے سہارے چلاجا

ذرا سوچ ناداں یہ ذرے نہیں ہیں
فلک چاند تارے بھی وارے چلاجا

گہے آنکھ سے گاہ پلکوں سے اپنی
مدینے کی گلیاں بہارے چلاجا

تجھے بڑھ کے آغوش میں لے گی رحمت
درودوں کے نغمے تو گائے چلاجا

وہ روضہ نبی کا ترے سامنے ہے
جھکالے تو سر کو جھکائے چلاجا

خدا کی یہ رحمت ہے سنتے ہیں سب کی
دکھوں کی کہانی سنائے چلاجا

وہ دریائے رحمت میں آیا تلاطم
تو آنکھوں سے دریا بہائے چلاجا

دعاؤں میں اپنی مجھے یاد رکھنا
تو جا خیر سے میرے پیارے چلاجا

یہ ریحاؔن بھی تجھ کو وہیں پر ملے گا
جہاں رحمتوں کے ہیں سائے چلاجا