Skip to main content
نعت

محمدﷺ نہ ہوتے تو کچھ بھی نہ ہوتا

By August 18, 2021No Comments

محمدﷺ نہ ہوتے تو کچھ بھی نہ ہوتا
یہ چرخِ بریں یہ قمریہ ستارے
سمندر کی طغیانیاں یہ کنارے
یہ دریا کے بہتے ہوئے صاف دھارے
یہ آتش کی سوزش یہ اڑتے شرارے
محمدﷺ نہ ہوتے تو کچھ بھی نہ ہوتا
عنادل کی نغمہ سرائی نہ ہوتی
ہنسی گُل کے ہونٹوں پہ آئی نہ ہوتی
کبھی سطوت قیصرائی نہ ہوتی
خدا ہوتا لیکن خدائی نہ ہوتی
محمدﷺ نہ ہوتے تو کچھ بھی نہ ہوتا
یہ راتوں کے منظر یہ تاروں کے سائے
خراماں خراماں قمر اس میں آئے
مرے قلب مخزوں کو آکر لبھائے
لٹاتا ہوا دولت نور جائے
محمدﷺ نہ ہوتے تو کچھ بھی نہ ہوتا
نہ بطن صدف میں‘ درخشندہ ہوتی
نہ سبزی قباؤں میں ملبوس گیتی
فلک پہ حسیں کہکشاں بھی نہ ہوتی
زمیں کی یہ پرکیف سوتا نہ سوتی
محمدﷺ نہ ہوتے تو کچھ بھی نہ ہوتا

Was this article helpful?
YesNo