Skip to main content
نعت

محض رخصت کونہ دیکھو عزیمت خوب کرنے دو

By August 30, 2021No Comments

محض رخصت کونہ دیکھو عزیمت خوب کرنے دو
سنو اب روح کو بھی تم ریاضت خوب کرنے دو

یہ لمحے زندگی کے اب تمہارے واسطے ہی ہیں
متاعِ زندگی سے اب تجارت خوب کرنے دو

انہیں کے واسطے ہی ہم بنے اور یہ جہاں آیا
فناوالوں بقا چاہو تو مدحت خوب کرنے دو

جو تعریفِ بقا چاہو، تو سن لو عشق والوں سے
رسولﷲ کی الفت ،محبت خوب کرنے دو

لٹا کر جان و دنیا ہم تمہارے واسطے آئے
نہ حائل ہو فرشتوں اب زیارت خوب کرنے دو

اشدّأ علی الکفار گر تم سے نہ ہو پائے
نہ روکو ظالموں ہم کو تو شدّت خوب کرنے دو

چلو مانا کہ ہم ہی ان کے اعداء سے الجھتے ہیں
ہمیں اپنے میں رہنے دو یہ فطرت خوب کرنے دو

امام احمد رضا کے مظہرِ کامل کا مصرع ہے
یہ شوقِ زندگی کیا ہے وہ رحلت خوب کرنے دو

بروز حشر وہ آئیں تو عاصی جھوم کر بولیں
ابھی جنت میں کیا جائیں زیارت خوب کرنےدو

چلو بخشیں شرف دل کو حرم کے خار مہماں ہوں
عجب صورت عجب معنیٰ میں دعوت خوب کرنے دو

ارے فاراں ذرا مقطع سے پہلے دل کو سن لیتے
نہ روکو مدحت آقا کی کثرت خوب کرنے دو

Was this article helpful?
YesNo