Skip to main content
نعت

لَیلتہ القَدر سے وَالفَجْر عیاں ہے کہ نہیں

By August 23, 2021No Comments

لَیلتہ القَدر سے وَالفَجْر عیاں ہے کہ نہیں
عارضِ نور پسِ زلف نہاں ہے کہ نہیں


کہیئے جنت کا مدینے میں سماں ہے کہ نہیں
جو وہاں لطف ہے رضواں وہ یہاں ہے کہ نہیں


یہ بھی سوچا کبھی اے شکوہ گرِ ہجرِ حبیب
کہ تِرا ذوق شعلہ بہ جاں ہے کہ نہیں


جامِ مَازَاغ سے اَسریٰ کا جھلکتا ہے سرور
چشمِ مخمورِ نبیﷺ بادہ فشاں ہے کہ نہیں


ہے تِری خاک ہمہ کیمیا تاثیر مگر
فطرتِ برق بھی ہستی میں نہاں ہے کہ نہیں


تم نے دیکھا ہے جہاں نقشِ کفِ پائے حضورﷺ
وہیں جبریل کے سجدے کا نشاں ہے کہ نہیں


یہ زمیں اور یہ اشعارِ شگفتہ اختؔر
مائلِ نعت مِری طبعِ رواں ہے کہ نہیں

Was this article helpful?
YesNo