Skip to main content
نعت

قصۂ کرب و اذیّت کیا کہوں ، کیوں کر کہوں

By August 25, 2021No Comments

فریادِ مجسّم

قصۂ کرب و اذیّت کیا کہوں ، کیوں کر کہوں
مضطرب دل کی حقیقت کیا کہوں، کیوں کر کہوں
ہر سکوں ہے نذرِ کلفت کیا کہوں، کیوں کر کہوں
لُٹ گیا سامانِ راحت کیا کہوں، کیوں کر کہوں
داستانِ شامِ غربت‘ کیا کہوں، کیوں کر کہوں
اے حبیبِ عرش رفعتﷺ‘ کیا کہوں‘ کیوں کر کہوں
میں گرفتارِ حوادث ہوں، کبھی صیدِ  اَلَم
مبتلائے دردِ پیہم ہوں، کبھی نخچیرِ غم
جاں گُسل حالات سے رہتا ہوں اکثر چشمِ نَم
توڑتی رہتی ہے مجھ پر گردشِ دوراں ستم
اپنی رودادِ مصیبت‘ کیا کہوں، کیوں کر کہوں
اے حبیبِ عرش رفعتﷺ‘ کیا کہوں‘ کیوں کر کہوں
ناگہانی آفتیں لحظہ بہ لحظہ ہیں فزوں
مِٹ چکا ہے اب کتابِ دل سے عنواں سکوں
ہوچکا اِک ایک ایوانِ مسّرت سرنگوں
زیست کا ہر سانس اب ہے حاملِ سورِ دروں
دن ہے محشر‘ شب قیامت کہا کہوں‘ کیوں کر کہوں
اے حبیبِ عرش رفعتﷺ‘ کیا کہوں‘ کیوں کر کہوں
ہر خوشی کے رُخ پہ اب رنج و محن کی گرد ہے
ہر تبسّم کی کلی کا غم سے چہرہ زرد ہے
ہر سکوں میں اِک پیامِ اضطرابِ درد ہے
ہر نَفَس گویا بجائے خود اِک آہِ سرد ہے
لُٹ گئی بزمِ مسرّت، کیا کہوں، کیوں کر کہوں
اے حبیبِ عرش رفعتﷺ‘ کیا کہوں‘ کیوں کر کہوں
غم سے خالی کوئی بھی ساعت نظر آتی نہیں
یک نَفَس آرام کی صورت نظر آتی نہیں
کوئی شَے دنیا میں جز کلفت نظر آتی نہیں
زندگی میں اب مجھے راحت نظر آتی نہیں
میں ہوں وہ برگستہ قسمت‘ کیا کہوں‘ کیوں کر کہوں
اے حبیبِ عرش رفعتﷺ‘ کیا کہوں‘ کیوں کر کہوں
ایک محرومِ کرم، محرومِ سایا، ہوں حضورﷺ
بخت کا مارا، زمانے کا ستایا ہوں حضورﷺ 
روح افسردہ، شکستہ قلب لایا ہوں حضورﷺ
بن کے فریادِ مجسّم در پہ آیا  ہوں حضورﷺ
آپ پر روشن ہے حالت‘ کیا کہوں‘ کیوں کر کہوں
اے حبیبِ عرش رفعتﷺ‘ کیا کہوں‘ کیوں کر کہوں
ٹھوکریں کھاتا رہوں آخر کہاں تک دَر بَدر
ہے کوئی پُرسانِ غم میرا نہ کوئی چارہ گَر
سوئے دَر ہے اب نگاہِ آرزو آٹھوں پہر
یا حبیبی یا رسول اللہﷺ بَرمَن یک نظر
اب نہیں کہنے کی طاقت کیا کہوں، کیوں کر کہوں
اے حبیبِ عرش رفعتﷺ‘ کیا کہوں‘ کیوں کر کہوں
نوشۂ بزمِ دَنیٰ، اَسْریٰ کے دولہا آپﷺ ہیں
صاحبِ قَوسَین، سلطانِ تدلّٰی آپﷺ ہیں
والضحٰی والشمس ہیں یٰس و طٰہٰ آپﷺ ہیں
نورِ حق ہیں‘ نور سر تا پا ہیں‘ کیا کیا آپﷺ ہیں
مہر بَر لب ہے شریعت‘ کیا کہوں‘ کیوں کر کہوں
اے حبیبِ عرش رفعتﷺ‘ کیا کہوں‘ کیوں کر کہوں
حاضرِ در ہے گدائے بابِ رحمت آپﷺ کا
اختؔرِ مدّاحِ سلطانِ رسالت آپﷺ کا
خاطئ و عاصی ہے یہ غرق ندامت آپﷺ کا
کچھ بھی ہے لیکن بہر صورت ہے، حضرت آپﷺ کا
آپ سے پھر بھی ہے نسبت‘ کیا کہوں‘ کیوں کر کہوں
اے حبیبِ عرش رفعتﷺ‘ کیا کہوں‘ کیوں کر کہوں

Was this article helpful?
YesNo