Skip to main content
نعت

فضا پُر کیف کیسی تھی جہاں میں تھا جہاں میں تھا

By August 27, 2021No Comments

جہاں میں تھا جہاں میں تھا

فضا پُر کیف کیسی تھی جہاں میں تھا جہاں میں تھا
ہر اک شے نورو نوری تھی جہاں میں تھا جہاں میں تھا
کھڑے تھے قدسیانِ عرش بھی جنت کے روضے پر
زمیں میں کیف و مستی تھی جہاں میں تھا جہاں میں تھا
مری پلکوں پہ موتی تھے نگاہوں میں وہ جالی تھی
عجب سی درفَشانی تھی جہاں میں تھا جہاں میں تھا
مراتن من چمک اٹھا ملی تھی روح کو لَمْعَت
وہ کیسی ضوفشانی تھی جہاں میں تھا جہاں میں تھا
قمر کو میں نے دیکھا ہے وہاں جھکتے ہوئے در پر
ستاروں کی لڑی سی تھی جہاں میں تھا جہاں میں تھا
گُنہ جھڑتے رہے میرے عجب رحمت کے جھونکے تھے
ہوا میں شوخ خنکی تھی جہاں میں تھا جہاں میں تھا
سناؤ قافلے والو تمہیں احساس کیسا تھا
وہاں ہر سانس مہکی تھی جہاں میں تھا جہاں میں تھا
بہر سو رقصِ بسمل تھا زمین کوئے جاناں پر
ہر اک پر وجد و مستی تھی جہاں میں تھا جہاں میں تھا
نہ کوئی فکرِ دنیا تھی نہ کوئی غم رہا حافؔظ
میسّر ایسی ہستیﷺ تھی جہاں میں تھا جہاں میں تھا
(۲۸ فروری ۲۰۱۶؁ء ۱۹ جمادی الاولیٰ ۱۴۳۷؁ھ)مدینہ منورہ

Was this article helpful?
YesNo