Skip to main content
نعت

فرقت طیبہ کی وحشت دل سے جائے خیر سے

By September 8, 2021No Comments

فرقت طیبہ کی وحشت دل سے جائے خیر سے

میں مدینے کو چلوں وہ دن پھر آئے خیر سے

دل میں حسرت کوئی باقی رہ نہ جائے خیر سے

راہِ طیبہ میں مجھے یوں موت آئے خیر سے

میرے دن پھر جائیں یا رب شب وہ آئے خیر سے

دل میں جب ماہِ مدینہ گھر بنائے خیر سے

رات میری دن بنے ان کی لقائے خیر سے

قبر میں جب ان کی طلعت جگمگائے خیر سے

ہیں غنی کے در پہ ہم بستر جمائے خیر سے

خیر کے طالب کہاں جائیں گے جائے خیر سے

وہ خرامِ ناز فرمائیں جو پائے خیر سے

کیا بیاں ہو زندگی وہ دل جو پائے خیر سے

مر کے بھی دل سے نہ جائے اُلفتِ باغِ نبی

خلد میں بھی باغِ جاناں یاد آئے خیر سے

رنج و غم ہوں بے نشاں آئے بہارِ بے خزاں

دل میں میرے باغِ جاناں کی ہوائے خیر سے

اس طرف بھی دو قدم جلوے خرامِ ناز کے

رہگذر میں ہم بھی ہیں آنکھیں بچھائے خیر سے

انتظار ان سے کہے ہے بزبان چشم نم

کب مدینہ میں چلوں کب تو بلائے خیر سے

شام تنہائی بنے رشک ہزاراں انجمن

یادِ جاناں دل میں یوں دھومیں مچائے خیر سے

فرقت طیبہ کے ہاتھوں جیتے جی مردہ ہوئے

موت یا رب ہم کو طیبہ میں جلائے خیر سے

ہو مجھے سیر گلستان مدینہ یوں نصیب

میں بہاروں میں چلوں خود کو گمائے خیر سے

زندہ باد اے آرزوئے باغ طیبہ زندہ باد

تیرے دم سے ہیں زمانے کے ستائے خیر سے

نجدیوں کی چیرہ دستی یا الہٰی تا بَکے

یہ بلائے نجدیہ طیبہ سے جائے خیر سے

جھانک لو آنکھوں میں ان کی حسرتِ طیبہ لئے

زائرِ طیبہ ضیائے طیبہ لائے خیر سے

ہے یہ طیبہ کا پیام اے طالب عیش دوام

جنتِ طیبہ میں آہستی مٹائے خیر سے

سنگِ در سے آملے طیبہ میں اب تو جاملے

آگئے در پہ تیرے ، تیرے بلائے خیر سے

گوش بر آواز ہوں قدسی بھی اس کے گیت پر

باغِ طیبہ میں جب اخترؔ گنگنائے خیر سے