Skip to main content
نعت

عروج آسماں کو بھی نہیں خاطر میں لائیں گے

By August 17, 2021No Comments

عروج آسماں کو بھی نہیں خاطر میں لائیں گے
مقدر سے اگر دوگز زمیں طیبہ میں پائیں گے


مدینے میں سنا ہے بگڑیاں بنتی ہیں قسمت کی
وہاں ہم جا کے اپنا بھی مقدر آزمائیں گے


اگر کل جان جانی ہو تو یارب آج ہی جائے
سنا ہے قبر میں بے پردہ وہ تشریف لائیں گے


کبھی میرا دل مضطر نہ ہونا کامراں یارب
ذرا ہم بھی تو دیکھیں وہ کہاں تک آزمائیں گے


قسم ہے مالک یوم قیامت کی قیامت میں
مرادیں اپنے دل کی ساقئ کوثر سے پائیں گے


مرا دل بن گیا ہے آستانِ صاحب اسریٰ
یہی کعبہ ہے اپنا ہم اسے کعبہ بنائیں گے


بھلا کیا تاب لائے گی نگاہِ حضرت موسیٰ
رخِ انور سے وہ اخؔتر اگر پردہ ہٹائیں گے

Was this article helpful?
YesNo