Skip to main content
نعت

عرشِ حق کا شانۂ مہردنیٰ ماہِ مبیں

By August 23, 2021No Comments

عرشِ حق کا شانۂ مہردنیٰ ماہِ مبیں
دل تجلّی خانۂ مہرِ دنیٰ ماہِ مبیں


تاجِ سُبحانَ الَّذِی اَسْریٰ ہے اے صلِّ عَلٰی
بر سرِ شاہانۂ مہرِدنیٰ ماہِ مبیں


فرش سے تا عرشِ اعلیٰ، عرش سے تا لامکاں
ہے حد کاشانۂ مہرِدنیٰ ماہِ مبیں


ہوش کی دنیا میں اک تیرے جنوں کی دھوم ہے
مرحبا دیوانۂ مہرِدنیٰ ماہِ مبیں


نقشِ وَاللِّیلِ اِذَایَغْشٰی کے آئینے میں ہے
طرزِ زلف و شانۂ مہرِدنیٰ ماہِ مبیں


دل بھی ہے ناچیز تحفہ ، جاں بھی ہے ناچیز شَے
کیا کروں نذرانۂ مہرِدنیٰ ماہِ مبیں


آیۂ لَاتَقْنَطُوا میں مستتر ہے عاصیو
بخششِ شاہانۂ مہرِدنیٰ ماہِ مبیں


کائناتِ حُسن میں تیری یہ نور افشانیاں
جلوۂ جانانۂ مہرِدنیٰ ماہِ مبیں


کوثر و تسنیم کے ہمراہ دے ساقی مجھے
خلد میں پیمانۂ مہرِدنیٰ ماہِ مبیں


مَے فشاں مینائے مَازَاغْ الْبَصَر سے ہے ہنوز
نرگسِ مستانۂ مہرِدنیٰ ماہِ مبیں


میں نے اختؔر پی ہے دستِ ساقی بغداد سے
بادۂ میخانۂ مہرِدنیٰ ماہِ مبیں

Was this article helpful?
YesNo