Skip to main content
نعت

کچھ حقیقت بھی بتا جلوۂ جاناں ہم کو

By August 20, 2021No Comments

کچھ حقیقت بھی بتا جلوۂ جاناں ہم کو
لوگ کہتے ہیں ملا طور کا میداں ہم کو


ہجر مولیٰ کی نہیں تاب یہاں بھی رضواں
خلد میں چاہئے چھوٹا سا بیاباں ہم کو


سر میں سودا ہے تو دل میں ہے تمنا ان کی
چشمِ بددور کہ کافی ہے یہ ساماں ہم کو


اللہ اللہ کہ ساحل کی ہے خود اس کو تلاش
اپنے دامن میں لئے پھرتا طوفاں ہم کو


خیر سے ہم بھی ہیں وابستۂ دامانِ کرم
دیکھ آنکھیں نہ دکھا جوشش عصیاں ہم کو


شادئ وصل کی تمہید ہے ہجرانِ نبی
جان بھی جائے تو سودا ہے یہ ارزاں ہم کو


راہِ پرخار میں تنہا ہوں کٹھن ہے منزل
خضرِ رہ بخشئے اک گوشۂ داماں ہم کو


جلوۂ طور سے ہے وادئ سینا معمور
اُن کے جلووں نے کیا چشمِ چراغاں ہم کو


بات بگڑی ہوئی بن جائے خطا کوشوں کی
دیکھے گر چشمِ کرم اشک بداماں ہم کو


للہ الحمد وہ سرکار سے نسبت ہے ہمیں
خلد دے دیں جو ملے ان کا بیاباں ہم کو


بے سبب صبح مدینہ کا نہیں پیار خلیؔل
راس آئی ہے مگر شام غریباں ہم کو

Was this article helpful?
YesNo