Skip to main content
نعت

شہر نبیﷺ تیری گلیوں کا نقشہ ہی کچھ ایسا ھے

By August 19, 2021No Comments

شہر نبیﷺ تیری گلیوں کا نقشہ ہی کچھ ایسا ھے
خلد بھی ھے مشتاقِ زیارت جلوہ ہی کچھ ایسا ھے


دل کو سکوں دے آنکھ کو ٹھنڈک روضہ ہی کچھ ایسا ھے
فرشِ زمین پر عرش بریں ہو لگتا ہی کچھ ایسا ھے


ان کے در پر ایسا جُھکا دل اٹھنے کا اب ہوش نہیں
اہل شریعت ہیں سکتے میں سجدہ ہی کچھ ایسا ھے


لوح و قلم یا عرش بریں ہو سب ہیں اس کے سایے میں
میرے بے سایہ آقا کا سایہ ہی کچھ ایسا ھے


سبطِ نبیﷺ ھے پُشت نبیﷺ پر اور سجدے کی حالت ھے
آقاﷺ نے تسبیح بڑھادی بیٹا ہی کچھ ایساھے


عرش معلیٰ سر پر اٹھائے طائر سدرہ آنکھ لگائے
پتھر بھی قسمت چمکائے تلوا ہی کچھ ایسا ھے


رب کے سوا دیکھا نہ کسی نے فرشی ہوں یا عرشی ہوں
ان کی حقیقت کے چہرے پر پردہ ہی کچھ ایسا ھے


تاج کو اپنے کاسہ بنا کر حاضر ہیں شاہانِ جہاں
ان کی عطا ہی کچھ ایسی ھے صدقہ ہی کچھ ایسا ھے


خم ہیں یہاں جمشید و سکندر اس میں کیا حیرانی ھے؟
ان کے غلاموں کا اے اخؔتر رتبہ ہی کچھ ایسا ہے

Was this article helpful?
YesNo