Skip to main content
نعت

 تسلئ دلِ ناشاد فرمائی نہیں جاتی

By August 20, 2021No Comments

 تسلئ دلِ ناشاد فرمائی نہیں جاتی
حضور اب خواب میں بھی شکل دکھلائی نہیں جاتی


نہیں جاتا مرا شوقِ تلاش کوچۂ جاناں
نہیں جاتی تمنائے جبیں سائی نہیں جاتی


ضرورتِ ہے کمالِ جذب کی راہِ محبت میں
زمین کوچۂ جاناں کہاں پائی نہیں جاتی


مرے آقاﷺ تری امت سے بخت و وقت روٹھے ہیں
یہ گھتی ایسی الجھی ہے کہ سلجھائی نہیں جاتی


کہاں وہ شوقِ اظہار تمنائے دل محزوں
کہاں اک بات بھی ہونٹوں پہ اب لائی نہیں جاتی


تعالیٰ اللہ زیبائی وجہِ احمدِ مرسل
کہ جلوے لا تُعدَ ہیں پھر بھی یکتائی نہیں جاتی


اگرچہ ہاتھ خالی ہیں مگر ہر شے کے والی ہیں
خلیؔل ان کے گدا کی شانِ دارائی نہیں جاتی

Was this article helpful?
YesNo