Skip to main content
نعت

شاہ دو جہاں میں ہے شہرہ تیری رحمت کا

By September 7, 2021No Comments

شاہ دو جہاں میں ہے شہرہ تیری رحمت کا
ہر ذرہ ثنا خواں ہے مولیٰ تیری رفعت کا

کچھ صرف غلاموں کی تخصیص نہیں اس میں
کفار نے بھی پایا صدقہ تیری رحمت کا

ہم بھول گئے تجھ کو تونے نہ کبھی چھوڑا
کس منہ سے کریں پھر ہم دعویٰ تری چاہت کا

خود امتی بننے کی مالک سے تمنا کی
موسیٰ نے سنا جس دم رتبہ تری امت کا

مخلوق الہٰی ہے شیدا تو تعجب کیا
جب خود ترا خالق ہے پیارا تری صورت کا

اس سر کی سرافرازی عالم سے بیاں کیا ہو
جس سر پہ رکھا حق نے تاج اپنی نیابت کا

دربار عدالت میں ہوتا جو نہ تو حامی
غرقاب ہی ہوجاتا بیڑا تری امت کا

ہم تیرے سوا کس سے فریاد کریں اپنی
ذمہ تو لیا تو نے امت کی حمایت کا

پڑتی ہے نظر سب کی آقا ترے دامن پر
اٹھتا ہے تری جانب منہ ساری ہی خلقت کا

میدان قیامت میں جتنے بھی کھڑے ہوں گے
منہ حشر میں دیکھیں گے پیاری تری امت کا

اللہ تعالیٰ کو اس بزم قیامت میں
منظور دکھاناہے سب کو تری عزت کا

کیا غم ہے غلاموں کو گھبراتے ہیں کیوں عاصی
سردار مدینہ جب دولہا ہے شفاعت کا

فہرست کھلی جس دم جنت میں پہنچنے کی
پہلے ہی نکل آیا نمبر تری امت کا

اک آن میں دھو دینا عصیاں کے سیہ نامے
ادنیٰ سا کرشمہ ہے اس چشم عنایت کا

صدیق و عمر دونوں بھیجیں گے غلاموں کو
جس وقت کھلے گا در مولیٰ تری جنت کا

یہ حکم ملک ہوگا مالک سے کہ اے مالک
باقی نہ رہے کوئی محبوب کی امت کا

سب اہل معاصی کے جب وزن ہوئے عصیاں
ان سب پہ ہوا بھاری پلہ تری رحمت کا

ہے ناز فقط ہم کو آقا کی شفاعت پر
تو شہ تو نہیں کچھ بھی پاس اپنے عبادت کا

دربار عدالت میں اللہ سے کہہ دوں گا
دےدے تو صلہ مجھ کو محبوب کی مدحت کا

دونوں ہوں بہم یکجا کعبہ بھی مدینہ بھی
گر کعبۂ دل میں ہو نقشہ تری تربت کا

پھر قلب میں بندوں کے ایک زلزلہ پیدا ہو
گر ذکر سنائیں ہم شاہا تری شوکت کا

زنا روصنم توڑے ایماں کے دیے توڑے
اعلان کیا تم نے جس وقت رسالت کا

سورج تو پلٹ آیا اور چاند بنائے دو
صرف ایک اشارہ تھا انگشت شہادت کا

فرزندوں کو جابر کے اک آن میں جاں بخشی
قدرت تو دکھائی تھی اور نام تھا دعوت کا

بندوں کو دیا سب کچھ فاقوں پہ گزاری خود
وہ طور سخاوت کا یہ حال قناعت کا

اعدانے تو یذادی مولیٰ نے دعا یوں کی
دکھلادے انہیں یارب رستہ تو ہدایت کا

جب قبر میں دیکھوں گا کہہ دوں گا یہ آقا سے
یاں کھینچ کے لایا ہے ارمان زیارت کا

بوجہل کو شان ان کی کس طرح نظر آتی
کذاب کی آنکھوں پر پردہ تھا ضلالت کا

سنی کی زباں پر تو ہے ذکر نبی ہر دم
نجدی کا وظیفہ ہے یہ شرک یہ بدعت کا

کیوں ناز جمیل اپنی قسمت پہ نہ ہو مجھ کو
اس نور کا بندہ ہوں مظہر ہے جو وحدت کا

قبالہ ٔ بخشش