Skip to main content
نعت

دیارِ طیبہ میں مرنے کی آرزو ہے حضورﷺ

By August 20, 2021No Comments

دیارِ طیبہ میں مرنے کی آرزو ہے حضورﷺ
یہی ہے متن یہی شرح گفتگو ہے حضورﷺ


ہنوز دل میں مرے دل کی آرزو ہے حضورﷺ
یہ میں ہوں اور یہ مرا شیشہ سُبو ہے حضورﷺ


بس اک اشارۂ ابرو سے بات بنتی ہے
وگرنہ خطرے میں امت کی آبرو ہے حضورﷺ


گناہگار کی عصیاں پناہیوں پہ نہ جائیں
کہ عفو و جود و سخا آپ کی تو خُو ہے حضورﷺ


نگاہِ لطف سے بس اب تو شاد کام کریں
کہ بے قرار مری طبع بادہ جو ہے حضورﷺ


دوام وصل الہٰی سے یہ ہوا ثابت
مقام آپ کا قُرب رگِ گلو ہے حضورﷺ


خدا کے واسطے جلووں سے سرفراز کریں
مجھے تجلئ ایمن کی آرزو ہے حضورﷺ


خدا کرے اسی حالت میں موت آجائے
شبیہ آپ کی سجدے میں روبرو ہے حضورﷺ


رگِ گلو کے قریں آکے گم ہوا ہے کہیں
خلیؔل زار کو منزل کی جستجو ہے حضورﷺ

Was this article helpful?
YesNo