Skip to main content
نعت

سنگِ درِ جاناں ہے اور ناصیہ فرسائی

By August 21, 2021No Comments

سنگِ درِ جاناں ہے اور ناصیہ فرسائی
یارب میرے سجدوں کی ہوجائے پذیرائی


اُس جلوۂ زیبا کے اللہ رے شیدائی
خود آپ تماشا ہیں خود آپ تماشائی


ہو راہ مدینہ میں یوں بادیہ پیمائی
ہر گام پہ سجدوں کی ہو انجمن آرائی


رہتی ہے نگاہوں میں فردوس کی رعنائی
خاک طیبہ ہے یا سرمۂ بینائی


بخشی ہے مسیحائی تم نے ہی مسیحا کو
تم جانِ مسیحا ہو، تم جانِ مسیحائی


اخلاق و محاسن میں، افضال و محامد میں
خالق نے تمہیں بخشی ہر شان میں یکتائی


بے اُن کے توسط کے، مانگے بھی نہیں ملتا
بے ان کے توسّل کے پرسش ہے نہ شنوائی


ہاں ان کے گداؤں میں، شامل ہیں سلاطیں بھی
ہان ان کے گداؤں پر قربان ہے دارائی


یاد شہِ کوثر میں، دل ہے یوں طرب آگیں
جیسے کہیں بجتی ہو فردوس میں شہنائی


دہلیز پہ روضہ کی نذرانے میں جاں دیدی
اللہ غنی میں اور یہ طُرَّۂ دانائی


رحمت نے خلیؔل ان کے دامن میں اماں بخشی
جب بھی مرے عصیاں نے چاہی مری رسوائی

Was this article helpful?
YesNo