Skip to main content
نعت

سلام شوق نسیم بہار کہہ دینا

By August 20, 2021No Comments

سلام شوق نسیم بہار کہہ دینا
مرا حضور سے سب حال زار کہہ دینا


سجودِ شوق کی اک آرزو ہے مدت سے
تڑپ رہا ہے دل بے قرار کہہ دینا


دئے ہیں سوزشِ غم نے وہ داغ سینے پر
تپک رہا ہے دلِ داغ دار کہہ دینا


جو دھجیاں ہیں گریبانِ زیست کی تن پر
ہوا ہی چاہتی ہیں تار تار کہہ دینا


ہمیں ملے جو اجازت تو سر کریں قرباں
حضور اب نہیں اٹھتا یہ بار کہہ دینا


یہ عرض کرنا کہ تنہا نہیں خلیؔل ملول
ہیں خادم آپ کے سب بے قرار کہہ دینا


وہ شہسوار کہ جس نے پہاڑ روندے تھے
پڑا ہوا ہے سرِرہ گزار کہہ دینا


وہ گلعذار کہ پھولوں سے کھیلتا تھا کبھی
وہ دشمنوں کے گلے کا ہے ہار کہہ دینا


وہ عندلیب کہ تھی جس کی لحن داؤدی
بلادِ غم کا ہوا ہے شکار کہہ دینا


وہ تاجدار کہ تھا میرِ کاروانِ جہاں
بھٹک رہا ہے برنگِ غبار کہہ دینا


وہ نوبہار کہ جس سے بہارِ عالم تھی
اب اُس پہ چھائی خزاں کی بہار کہہ دینا


وہ نامدار کہ جس کی پکار تھی سب میں
ہے آج سب کی نگاہوں میں خوار کہہ دینا


وہ گلستان میں عنادل کے چہچہے نہ رہے
اجڑ چکا چمن روزگار کہہ دینا


نہ اب وہ شوکت و حشمت نہ دبدبہ اپنا
نہ اب وہ شان نہ عز و وقار کہہ دینا


نہ خیر خواہ کوئی ہے نہ ہمنوا کوئی
نہ کوئی مونس و ہمدم نہ یار کہہ دینا


نہ یہ کہ ہم سے کدورت ہے دشمنوں کو فقط
ہے دوستوں کے بھی دل میں بخار کہہ دینا


غرض کہ حال وہ ہے جیسے زیرپا آتش
جگر ہے زخمی تو سینہ فگار کہہ دینا


ہے مختصر کہ یہ رودادِ غم، سنا دینا
غرض کہ جیسے ہیں لیل و نہا کہہ دینا


یہ روکے کہنا کہ سرکار کی دہائی ہے
کہ ایک دل میں ہیں ناسور ہزار کہہ دینا


تمہیں سے آس لگائی ہے غم کے ماروں نے
تمہیں سنو گے ہماری پکار کہہ دینا


تمھاری ایک نگاہِ کرم میں سب کچھ ہے
تمہیں وہ حق نے دیا اختیار کہہ دینا


ادھر تو نامۂ اعمال میں نہیں نیکی
اُدھر ہے سر پہ گناہوں کا بار کہہ دینا


دکھانے آئے ہیں بس زخم دل تمھارے حضورﷺ
وگرنہ تم پہ ہے سب آشکار کہہ دینا


حضورﷺ آپ جو گستاخیاں معاف کریں
تو اذن چاہتے ہیں گُنْہَ گار کہہ دینا


ملے اجازتِ رخصت تو چوم لینا زمیں
سلامِ شوق بھی ہاں بار بار کہہ دینا


خلیؔل زار کی جانب سے پھر ہزار سلام
بڑے ادب سے بصد انکسار کہہ دینا

Was this article helpful?
YesNo