Skip to main content
نعت

زہے بخت مل جائے وہ آستانہ

By August 18, 2021No Comments

زہے بخت مل جائے وہ آستانہ
جہاں جھک گئی ہے جبین زمانہ


جہاں کا مکیں ہو مرا کملی والا
وہیں پر الٰہی ہو ختم فسانہ


نہیں ہوں طلب گار انداز زاہد
ہمارا ہو ہر اک قدم حیدرانہ


فلک کو بھی روند آئے میرا نصیبہ
تراگر اشارہ ہو شاہِ زمانہ


فراق محمدﷺ میں آنسو بہا کر
مجھے آگیا دائمی مسکرانہ


ترے دست پہ چشم تشنہ لباں ہے
ادھر ساقیا جامِ رنگیں بڑھانا


ترے اک اشارے پہ ہو جائے آساں
خطر ناک طوفان سے کھیل جانا


زباں ہے میری خوگر نعت احمد
یہی ہے ہمارے لبوں کا ترانا


اے اخؔتر چلے آؤ طیبہ کی جانب
خدا کا کرم چاہتا ہے بہانہ

Was this article helpful?
YesNo