Skip to main content
نعت

زمیں کیا آسماں پر مِرے آقا کی سطوت ہے

By August 14, 2021No Comments

   زمیں کیا آسماں پر مِرے آقا کی سطوت ہے
عطائے رب اکرم سے ہر اک شےپر حکومت ہے

ہر اک شے پر حکومت ہے مگر ہیں پیٹ پر پتھر
غریبوں سے یتیموں سے انہیں کتنی محبت ہے

بشر ہیں وہ مگر ایسے بشر فخرِ بشر کہیے
کہ آدم بو البشر کو بھی مرے آقا کی حاجت ہے

وہ مکہ میں ہوئے پیدا مدینے میں وہ رہتے ہیں
مگر ان کا وجود پاک ہر عالم کی رحمت ہے

نبی ہیں ان سے کوئی چیز مخفی رہ نہیں سکتی
کہ غیبوں کی خبر رکھنا خبر دینا نبوت ہے

کبھی میزان پر ہیں اور کبھی ہیں حوض کوثر پر
غمِ امت میں کتنی مضطرب ان کی شفاعت ہے

جو منکر ہے شہ دیں کا قیامت اس پہ ٹوٹے گی
مجھے کیا خوف محشر کا مجھے ان سے محبت ہے

گلستانِ رضا کا پھول ہوں ریحاؔن کہتے ہیں
مِرا آغاز جنت ہے مِرا انجام جنت ہے