Skip to main content
نعت

زائر ہیں رواں شام و سحر سُوئے مدینہ

By August 23, 2021No Comments

زائر ہیں رواں شام و سحر سُوئے مدینہ
اے کاش ہو اپنا بھی سفر سُوئے مدینہ


سر سُوئے حرم، دل ہے مگر سُوئے مدینہ
سجدے ہیں بالفاظِ دگر سُوئے مدینہ


اِتنی ہو وارفتگئ شوقِ نظارا
ہر وقت ہو بیتاب نظر سُوئے مدینہ


اُٹھ اور نئے انداز سے اُٹھ میں تِرے صدقے
لے چل مجھے اے دردِ جگر سُوئے مدینہ


ذرّاتِ مدینہ کی کِشش دیکھ رہا ہوں
جاری ہے ستاروں کا سفر سُوئے مدینہ


ہر ذرّہ ہمہ طُور، ہمہ برقِ تجلّی
باچشمِ کلیمانہ مگر سُوئے مدینہ


کب دیکھئے سرکار سے آتا ہے بُلاوا
دن رات ہے اختؔر کی نظر سُوئے مدینہ

Was this article helpful?
YesNo