Skip to main content
نعت

روشن نہ ہو کیوں منزلِ تقدیرِ تمنّا

By August 21, 2021No Comments

روشن نہ ہو کیوں منزلِ تقدیرِ تمنّا
ہیں آپ چراغِ رہِ تدبیرِ تمنّا


آزاد ہے ہر فکر سے اے گیسوؤں والے
تیرا جو ہوا بستۂ زنجیرِ تمنّا


اب اور وہ رکھتے مِری غربت کا بھرم کیا
گھر بیٹھے عطا کی مجھے جاگیرِ تمنّا


یا دَر پہ بُلا لیجئے سرکارِ دوعالمﷺ
یا مجھ کو بنا دیجئے تصویرِ تمنّا


ہو آپﷺ سے جس خوابِ تمنّا کا تعلّق
وہ خواب حقیقت میں ہے تعبیرِ تمنّا


طیبہ ہی میں رہوارِ تمنّا نے لیا دَم
گو لاکھ ہوئی یاس غنا گیرِ تمنّا


آرام دہِ جاں ہے یہ اے جانِ مسیحاﷺ
دل میں مرے پیوست رہے تیرِ تمنّا


آسودہ ہے ظلِّ کرمِ سرورِ دیں میں
بیدار بھی ہو جائے گی تقدیرِ تمنّا


ظلمّکدہ یاس میں ہے تجھ سے اُجالا
اے مہرِ عرب، مرکزِ تنویرِ تمنّا


آراستۂ نعت ہے قرطاسِ عقیدت
اللہ غنی شوخئ تحریرِ تمنّا


اختؔر وہ درِ جانِ تمنّا نظر آیا
تم اب تو ہوئے قائلِ تاثیرِ تمنّا

Was this article helpful?
YesNo