Skip to main content
نعت

اے جذبۂ محبت کچھ جذبِ دل دکھا دے

By August 20, 2021No Comments

اے جذبۂ محبت کچھ جذبِ دل دکھا دے
طیبہ کی ہر گلی میں کعبہ مرا بنادے


اے صر صرِ محبت طیبہ اڑا کے لے چل
للہِ اب ٹھکانے مٹی مِری لگادے


رہ رہ کے پھر جبیں میں سجدے تڑپ رہے ہیں
اے خضرِ عشق راہِ کوئے نبی بتا دے


بخشا ہے گر زباں کو ذوقِ شراب تو نے
ساقی میں ترے صدقے کوثر کی مے پلا دے


آداب بندگی سے واقف نہیں ہے یہ دل
کچھ دردِ عشق دے کہ درد آشنا بنا دے


جو آہ لب سے نکلے دَم ان کا بھرتی نکلے
اے عشقِ روئے انور دل میں وہ لو لگا دے


اٹھتی ہوئی ہیں موجیں بڑھتا ہوا ہے طوفاں
بگڑی بنانے والے بگڑی مری بنادے


آ کر سگانِ طیبہ میّت مری اٹھائیں
اے رحمتِ دو عالم اتنا تو مرتبا دے


رحمت تری قریں ہے ٹوٹے ہوئے دلوں سے
بچھڑے ہوؤں کو یارب اک بار پھر ملا دے


تیری عطا فزوں ہے میری طلب کا منہ کیا
میری طلب سے افزوں اے میرے کبریا دے


ہر صبح، شام سی ہے ناکامِ زندگی کی
ہر شامِ زندگی کو میری سحر بنادے


پھر معصیت نے ڈیرا ڈالا ہے گردشوں کا
یارب مجھے پناہِ دامانِ مصطفیٰﷺ دے


یارب خلیؔل مضطر ہے خوار و زار و ابتر
اچھے میاں کا صدقہ اچھا مجھے بنادے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Was this article helpful?
YesNo